پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو کی راولپنڈی میں پنجاب سیکر ٹریٹ آفس کی افتتاحی تقریب کے حوالے سے تمام تر تیاریوں کو حتمی شکل دیدی گئی ہے

ppp-jalsa-app-670

لاہور۔۔۔۔۔ وفاقی وزیر اور صدر پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب میاں منظور احمد وٹو نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی کی موجودہ حکومت نے تاریخ میں پہلی بار جمہوریت کو مضبوط بنانے کے لئے الیکشن کمیشن کو آزاد، غیر جانبدار ، مضبوط اور خود مختار بنایا۔

اسلام آباد روانگی سے قبل میڈیا سے بات چیت میں انہوں نے کہا کہ جمہوریت اور جمہوری اداروں کو مضبوط بنانے کے لئے حکومت کی سنجیدگی کا اس سے بڑا اور کوئی ثبوت نہیں کہ اپوزیشن کے تجویز کردہ چیف الیکشن کمشنر کا تقرر کیا گیا۔ میاں منظور وٹو نے کہا کہ ن لیگ کا الیکشن کمیشن کے باہر دھرنا بلا جواز ہے اور وہ قوم کو اس کا مقصد بتانے میں ناکام رہی ہے کیا وہ اپنے ہی نامزد کردہ چیف الیکشن کمشنر کے حلاف احتجاج کر رہی ہے یا اس کے مقاصد کچھ اور ہیں اس حوالے سے ابھی تک کنفیوژن برقرار ہے ، انہوں نے کہا کہ عام انتخابات میں یقینی شکست کے خوف سے ن لیگ بوکھلاہٹ کا شکار ہے کبھی وہ بلوچستان اور کراچی میں بد امنی کا نام لیتی ہے اور کبھی اپنے ہی تجویز کردہ چیف الیکشن کمشنر کے خلاف دھرنا دیتی ہے ۔
میاں منظور وٹو نے کہا کہ حکومت منصفانہ و شفاف انتخابات کو یقینی بنانے اور الیکشن کمیشن کو مضبوط بنانے کے لئے آخری حد تک جائے گی ، انہوں نے کہا کہ بلا جواز دھرنو ں سے حکومت پر دباؤ نہیں ڈالا جا سکتابلکہ ایسے اقدامات سے ن لیگ کی تیزی سے گرتی ہوئی ساکھ کو مزید نقصان پہنچے گا ، انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ لوگوں کی بہت کم تعداد نے اس دھرنے میں شرکت کی۔

جبکہ تمام محب وطن حلقے اس سے لا تعلق رہے ،، میاں منظور وٹو نے کہا کہ تمام جمہوری قوتوں اور سول سوسائٹی کو الیکشن کمیشن پر بھرپور اعتماد ہے اور وہ بروقت منصفانہ وآزاد الیکشن چاہتے ہیں جبکہ ن لیگ نان ایشوز کو ایشو بنا کر عام انتخابات کے التوا کی سازشیں کر رہی ہے جو کسی صورت کامیاب نہیں ہونگی ، انہوں نے کہا کہ عوام باشعور ہیں اور وہ میرٹ پر ہی اپنے ووٹ کی پرچی کا درست استعمال کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی کو پہلے سے زیادہ تائید سے سرفراز کریں گے ، تاکہ جمہوریت مضبوط ہو اور ملک و قوم ترقی کی شاہراہ پر گامزن ہو سکیں ۔

دریں اثناء پیپلز پارٹی پنجاب سیکر ٹریٹ آفس راولپنڈی میں 8فروری بروز جمعتہ المبارک پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو کی پنجاب سیکر ٹریٹ آفس کی افتتاحی تقریب کے حوالے سے تمام تر تیاریوں کو حتمی شکل دیدی گئی ہے جبکہ اس ضمن میں تین رکنی کمیٹی بھی تشکیل دیدی گئی ہے ۔

اس حوالے سے بات چیت کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے سینئر رہنماء و پنجاب سیکرٹریٹ آفس راولپنڈی کے انچارج حاجی سلیم خان چھمیہ نے بتایا کہ میاں منظور احمد وٹو کی راولپنڈی میں پارٹی حوالے سے پہلی مرتبہ آمد کے موقع پر تمام تر تیاریوں کو حتمی شکل دیدی گئی ہے۔

جبکہ تین رکنی کمیٹی کے اراکین میں سردار مقبول ایڈووکیٹ، اسرار عباسی ایڈووکیٹ، نےئر پیرذادہ، مرزا طارق بیگ، مبین، بابو ادریس، ملک اسرار، افضل امین ، چوہدری اصغر ، ملک شوکت ایڈووکیٹ ، انور جدون، بابر بٹ، راجہ ظہیر ، قاضی سہیل، ساجد تنولی،راجہ شیراز کیانی، تنویر اقبال پاشاو دیگر شامل ہیں جبکہ ان کے استقبال کے لئے پی ایس ایف اور پی وائے او کے نوجوان بھرپور طریقے سے شرکت کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ راولپنڈی شہر کو دلہن کی طرح سجایا جائے گا اور بھر پور طریقے سے ان کا استقبال کیا جائے گا۔

علاوہ ازیں اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے میاں منظور وٹو نے کہاکہ آج 5فروری کو آزادکشمیر کے تینوں انٹری پوائنٹس کوہالہ‘ منگلا اور آزاد پتن پر انسانی ہاتھوں کی زنجیر بنائی جائے گی۔ مظفر آباد میں آزاد کشمیر کونسل اور اسمبلی کا مشترکہ اجلاس ہوگا جس میں صدر آزاد کشمیر آزاد کشمیر کے وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کا پیغام پڑھ کر سنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں اقوام متحدہ کے دفتر میں مسئلہ کشمیر کے حل بارے خصوصی یادڈاشت بنام سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ پیش کی جائے گی۔ ہم اپنے ہمسائیے بھارت کے ساتھ کشیدگی نہیں چاہتے دوستانہ ماحول میں معاملات حل کرنا چاہتے ہیں جہاں تک بھارت کو پسندیدہ ملک کا درجہ قرار دینے کی بات ہے یہ محض ایک تجارتی معاملہ ہے اور یہ تجارت صرف پاکستان اور بھارت کے درمیان نہیں بلکہ آزاد کشمیر اور مقبوضہ کشمیر کے درمیان بھی جاری ہے‘ پیپلز پارٹی کی بنیاد مسئلہ کشمیر پر رکھی گئی اور کشمیر کے چپے چپے پر بھٹو اور شہید بینظیر کے قدموں کے نشان موجود ہیں‘ بینظیر نے حریت کانفرنس کو او آئی سی میں ممبر کا درجہ دلوایا۔کشمیر بارے پاکستان کا بچہ بچہ کمٹڈ ہے‘ پاکستان میں برسراقتدار آنے والی کوئی بھی پارٹی قومی موقف سے پیچھے نہیں ہٹ سکتی۔ انہوں نے کہاکہ جنوبی ایشیا میں کشمیر کے مسئلے کو حل کئے بغیر امن قائم نہیں ہوسکتا اور کشمیریوں نے عزم کر رکھا ہے کہ وہ آزادی اور الحاق پاکستان کے حصول تک اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں