Pakistan pre-election survey puts PPP at top, followed by PML-N and PTI – by Ada Khakwani

ppp

Note: Despite numerous terrorist attacks and vicious propaganda by affiliates and apologists of Takfiri Deobandi militants (Taliban, ASWJ, JI, DPC etc) and conspiracies by pro-establishment fake liberals, Pakistan Peoples Party remains the only hope of majority of progressive and secular Pakistanis who want to build a democratic, secular and multicultural Pakistan. Recent Dawn-SRDPI survey shows that the party (PPP) is ahead of its right-wing opponents and is particularly popular in the have-nots of the society. This, then, places a greater responsibility on the party and its leadership to take tough action against Takfiri Deobandi militants (Taliban, ASWJ etc) and also get rid of fake liberals who remain tightly loyal to PML-N and other right-wing parties, present Takfiri hate clerics as prophets of peace, and at the same time promote themselves as well wishers of secular forces including PPP.
Elections 2013: survey indicates close contest
By Alizeh Kohari and Saba Fatima Mirza
Source: Dawn
Pakistani voters appear divided on who to vote for in the upcoming elections and which issues are most critical for the country, according to the Political Barometer, an opinion survey conducted by the Herald in partnership with the Sustainable Development Policy Institute (SDPI).
The survey engaged 1,283 respondents in 54 districts across Pakistan.
Of those who said they had registered for the upcoming elections and indicated a party preference, 29 per cent said they would vote for the PPP, 25 per cent support the PML-N and 20 per cent plan to vote for the Pakistan Tehrik-i-Insaaf (PTI).
1
Mind the generation gap
Dispelling the notion that the PTI’s vote bank is concentrated in younger generations, survey findings indicate that the party derives support from all ages.
While 23 per cent of those in the 18-to-35 age group said they would vote for the PTI, approximately 19pc of those aged between 36 and 70 claimed the same.
A plurality (33pc) of those aged 36 to 50 support the PPP. Forty-six per cent of those over 70 prefer the PML-N.
2
Respondents were also asked who they have voted for most frequently in the past. Looking at these voting histories, the PML-N’s vote bank appears to have remained stable while the PPP’s seems to have declined significantly.
The ethnic vote
In line with expectations, 55pc of those who identified themselves as Sindhis said they would vote for the ruling party in the upcoming elections.
Forty-four per cent of Hindko speakers intend to vote for the PML-N. The same proportion supports the PTI, suggesting a close contest between the two parties within that demographic.
And while 34pc of Pakhtuns are in favour of the PTI, only 11pc said they would vote for the Awami National Party (ANP).
Money matters
In keeping with the PPP’s pro-poor image, approximately a third of those with a monthly family income of up to Rs30,000 plan to vote for the party. Support drops to 11pc among higher income brackets.
3
The majority of those earning more than Rs250,000 intend to vote for the Muttahida Qaumi Movement (MQM) or the PTI (33pc each).
While this figure may appear anomalistic in the MQM’s case — support for the party within the second-highest income bracket was only 4pc — it was possible to identify a rough direct trend between level of income and support for the PTI.
It’s the issues, stupid
From a given list, respondents identified poverty, corruption, the energy crisis, illiteracy and extremism as the top five issues the country faces today.
No issue received more than 17pc of the vote, indicating an electorate with varying priorities.
Paradoxically, 27pc of respondents — higher than for any other party — said the PPP would be most effective in addressing the identified issues, even though 59pc rated the current government’s performance as “poor” or “very poor”.
Those with higher incomes appeared most unhappy with the current government — a surprising conclusion given that of the top five identified issues, at least two are of greater direct concern to low-income respondents.
Dissatisfaction also rose slightly with increasing education levels and among urban respondents.
Getting out the vote
Approximately 21pc of respondents admitted to never having voted before.
There appears to be a negative correlation between inclination to vote and income level: 38pc of those with monthly family incomes above Rs250,000 had never voted, compared to 13pc of those in the earning less than Rs3,600, the lowest income bracket.
Despite this, those in the highest income bracket were most likely (at 38pc) to have been members of political parties.
And contrary to the notion that more education might equal greater political participation, 87pc of those with no education claimed to have voted in three or more elections while only 38pc of those with at least a bachelor’s degree had done so.
Ninety-four per cent of respondents did say, though, that they were registered to vote in the upcoming elections.
But from a closely contested playing field, who will emerge at the helm of the incoming government?
Three scenarios
According to Dr Abid Suleri, executive director of the SDPI, the outcome of the elections could unfold in a number of ways.
Scenario one: the PPP forms an electoral alliance with its current allies, the ANP, the MQM and the PML-Q.
A grand anti-PPP alliance, comprising the PML-N, the Jamiat Ulema-i-Islam-Fazl (JUI-F) and the Jamaat-i-Islami (JI), but not the PTI, simultaneously takes shape.
Based on the findings of this survey, the PPP and its allies would be able to secure 38pc of the vote. The anti-PPP alliance could secure 30pc. Along with the PTI, it could give the PPP a difficult time in parliament.
Scenario two: the PPP forms a partnership with its current allies except the MQM, which opts for the anti-PPP alliance. Here too, the PTI chooses to remain alone.
In this case the PPP and its allies would likely capture 34pc of the vote, with the opposing alliance securing a similar percentage. The minority government in this instance would be weaker than in the first scenario, with a more formidable opposition.
Scenario three: the PPP forms an alliance with its current allies, the PTI teams up with the JI, and the PML-N forms an alliance with the JUI-F and other anti-PPP parties.
In this instance, the PPP and its allies would receive 38pc of the vote, the PML-N team would receive 26pc and the PTI-JI pairing would capture 24pc.
Verdict
Given the widely varying voting patterns across constituencies, the actual outcome could be entirely different from those described above.
It is evident, though, that no single party currently stands to sweep the upcoming polls.
It also appears that the PPP will have to retain its current allies to maintain political clout, and that, amidst the traditional PPP-PML-N toss-up, the PTI is emerging as a political reality.Whoever does manage to form the next government will most likely have to contend with a strong opposition.
And if the Political Barometer’s findings are any indication, that government might also find it difficult to determine which issues to tackle first to soothe an electorate clamouring for change.
Full results of the survey can be found in a supplement distributed alongside the Herald’s February issue
[youtube http://www.youtube.com/watch?v=rl0BTvJgROM?feature=oembed]
Urdu version

انتیس فیصد لوگ پاکستان پیپلز پارٹی، پچیس فیصد مسلم لیگ ن، اور بیس فیصد تحریک انصاف کو ووٹ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

ڈان اخبار

ایک تازہ سروے کے مطابق آئندہ عام انتخابات میں ووٹ دینے اور اہم مسائل کے حوالے سے پاکستانی عوام کی رائے منقسم ہے۔

ہیرالڈ میگزین نے ایس ڈی پی آئی کے ساتھ مل کر پاکستان بھر کے چوون اضلاع میں 1٫283 لوگوں پرمشتمل ایک سروے کیا ہے۔

سروے کے مطابق، رجسٹرڈ ووٹروں میں سے انتیس فیصد لوگ پاکستان پیپلز پارٹی، پچیس فیصد مسلم لیگ ن، اور بیس فیصد تحریک انصاف کو ووٹ دینے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

سروے سے اس تاثر کی نفی ہوئی ہے کہ پی ٹی آئی کے ووٹ بینک کا زیادہ حصہ نوجوانوں پرمشتمل ہے۔ سروے کے مطابق عمران خان کو عمر کے ہر حصے کے لوگوں کی حمایت حاصل ہے۔

اٹھارہ سے پینتیس سال کے تئیس فیصد رائے دہندگان کا کہنا ہے کہ وہ پی ٹی آئی کو ووٹ دیں گے۔

اسی طرح چھتیس سے ستر سال تک کی عمر کے تقریباً انیس فیصد لوگ بھی یہی ارادہ رکھتے ہیں۔

دوسری جانب، چھتیس سے پچاس سال کی عمر کے تینتیس فیصد رائے دہندہ پی پی پی کی حمایت کرتے نظر آتے ہیں۔

ستر سال سے زائد عمر کے چھیالیس فیصد لوگ ن لیگ کے حامی ہیں۔

سروے میں رائے دہندگان سے یہ بھی پوچھا گیا کہ ماضی میں وہ کس پارٹی کو ووٹ دیتے آئے ہیں؟

اس سوال کے جوابات سے معلوم ہوتا ہے کہ اب تک مسلم لیگ ن کا ووٹ بینک کم و بیش برقراررہا ہے تاہم ماضی کے مقابلے میں پی پی پی کے ووٹ بینک میں نمایاں کمی ہوئی ہے۔

حسب توقع، خود کو بطور سندھی متعارف کرانے والے پچپن فیصد رائے دہندگان نے کہا کہ وہ آئندہ انتخابات میں تیر کے نشان پر مہر لگائیں گے۔

ہندکو بولنے والے چونتالیس فیصد رائے دہندگان کا جھکاؤ ن لیگ کی طرف تھا۔

اتنا ہی تناسب پی ٹی آئی کے حصے میں بھی آیا جس سے اندازہ ہوتا ہے کہ ہندکو بولی والے علاقے میں دونوں حریف پارٹیوں کے درمیان سخت مقابلہ متوقع ہے۔

پشتو بولنے والے چونتیس فیصد رائے دہندگان پی ٹی آئی جبکہ صرف گیارہ فیصد عوامی نیشنل پارٹی کے حق میں ہیں۔

تقریباً ایک تہائی رائے دہندگان جن کے خاندان کی ماہانہ آمدنی تیس ہزار سے کم ہے پی پی پی کے حامی ہیں جس سے لگتا ہے کہ حکمران جماعت اپنے غریب دوست ہونے کے تصور کو برقرار رکھنے میں کامیاب رہی ہے ۔

زیادہ آمدنی والے رائے دہندگان میں پی پی پی کے لیے حمایت کم نظر آئی۔

ڈھائی لاکھ روپے یا اس سے زائد آمدنی والے تینتیس فیصد رائے دہندگان نے متحدہ قومی موومنٹ یا پھر پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کا ارادہ ظاہر کیا۔

سروے کے دوران دی جانے والی فہرست میں سے رائے دہندگان نے غربت، بدعنوانی، توانائی کے بحران، ناخواندگی اور شدت پسندی کو موجودہ دور میں ملک کے سب سے اہم مسائل قرار دیا۔

تاہم کوئی بھی مسئلہ سترہ فیصد سے زیادہ ووٹ حاصل نہ کر سکا جس سے معلوم ہوتا ہے کہ رائے دہندگان اہم ترین مسائل کے حوالے سے بھی مختلف سوچ رکھتے ہیں۔

سروے میں انسٹھ فیصد رائے دہندگان نے موجودہ حکومت کی کارکردگی کو ‘خراب’ یا ‘انتہائی خراب’ قرار دیا۔
اس کے باجود دلچسپ بات یہ ہے کہ ستائیس فیصد رائے دہندگان سمجھتے ہیں کہ اوپر بیان کیے گئے مسائل کو صرف پی پی پی ہی بہترانداز میں حل کر سکتی ہے۔

سروے کے مطابق، پانچ سرفہرست مسائل میں سے کم از کم دو کا براہ راست تعلق کم آمدنی والے گروپ سے ہے لیکن اس کے باوجود سب سے زیادہ آمدنی والے رائے دہندگان کا گروپ موجودہ حکومت سے انتہائی ناخوش دیکھائی دیا۔

سروے میں شامل اکیس فیصد رائے دہندگان نے یہ بھی تسلیم کیا کہ انہوں نے اس سے پہلے کبھی ووٹ نہیں دیا۔

سروے کے مطابق، ڈھائی لاکھ روپے ماہانہ آمدنی والے خاندانوں سے تعلق رکھنے والے اڑتیس فیصد رائے دہندگان نے کبھی ووٹ نہیں دیا۔

اس کے برعکس ماہانہ آمدنی کے سب سے نچلے گروپ ( 3٫600 روپے ماہوار) میں یہ تناسب تیرہ فیصد تھا۔

سروے کے مطابق، ستاسی فیصد ناخواندہ رائے دہندگان نے دعویٰ کیا کہ وہ زندگی میں تین یا اس سے زیادہ انتخابات میں ووٹ ڈال چکے ہیں۔

اس کے مقابلے میں بیچلر ڈگری رکھنے والوں میں سے محض اڑتیس فیصد رائے دہندگان کبھی نہ کبھی ووٹنگ کے عمل میں شامل ہوئے۔

چورانوے فیصد رائے دہندگان کا کہنا تھا کہ انہوں نے آئندہ انتخابات کے لیے اپنی رجسٹریشن کرا لی ہے۔

سروے سے اخذ نتائج سے معلوم ہوتا ہے کہ آئندہ الیکشن میں کسی ایک پارٹی کو واضح اکثریت نہیں ملے گی اور تمام بڑی جماعتیں الیکشن کے میدان میں بھر پور انداز میں آمنے سامنے ہوں گی۔

اس صورتحال میں اگلی حکومت کس کی ہو سکتی ہے؟

ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکیٹیو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد سلہری اس سوال کا جواب دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ آئندہ انتخابات کے نتائج مخلتف صورتوں میں سامنے آ سکتے ہیں۔

پہلی صورتحال

پی پی پی اپنے موجودہ اتحادیوں (ایم کیو ایم، اے این پی اور ق لیگ) کے ساتھ انتخابی اتحاد بناتی ہے۔

اس کے مقابلے میں پی پی پی مخالف اتحاد سامنے آتا ہے جس میں ن لیگ، جے یو آئی (ف) اور جماعت اسلامی شامل ہوں تاہم تحریک انصاف اس اتحاد سے دور رہے۔

ایسے میں سروے کے نتائج سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ پی پی پی اور اس کے اتحادی اڑتیس فیصد ووٹ حاصل کرنے میں کامیاب رہیں گے۔

دوسری جانب اپوزیشن جماعتوں کا اتحاد تیس فیصد ووٹ حاصل کر پائے گا۔

تاہم اگر عمران خان بھی اس اتحاد میں شامل ہو جائیں تو پی پی پی کو پارلمینٹ میں مشکلات کا سامنا ہو گا۔

دوسری صورتحال

پی پی پی ایم کیو ایم کو چھوڑ کر باقی اتحادیوں کے ساتھ انتخابات میں حصہ لے۔

ایم کیو ایم مخالف کیمپ کا حصہ بن جائے اور پی ٹی آئی ایک مرتبہ پھر تنہا الیکشن میں اترے تو ایسے میں پی پی پی کیمپ چونتیس فیصد ووٹ حاصل کر سکے گا جبکہ مخالف کیمپ کو بھی کوئی واضح برتی نہیں ہو گی اور انہیں بھی تقریباً اتنے ہی ووٹ ملیں گے۔

اس صورتحال میں تشکیل پانے والی حکومت بہت کمزور ہو گی اور اسے پارلیمنٹ میں زبردست اپوزیشن کا سامنا رہے گا۔

تیسری صورتحال

پی پی پی اپنے موجودہ اتحادیوں کے ساتھ الیکشن لڑے، پی ٹی آئی جماعت اسلامی سے ہاتھ ملا لے اور ن لیگ جے یو آئی (ف) اور دوسری پی پی پی مخالف جماعتوں کے ساتھ میدان میں اترے۔

ایسے میں پی پی پی اور ان کے ساتھی اڑتیس فیصد، ن لیگ کی ٹیم چھبیس فیصد جبکہ پی ٹی آئی اور جماعت اسلامی چوبیس فیصد ووٹ حاصل کر سکیں گے۔

فیصلہ
ملک کے وسیع حلقوں میں کیے گئے اس سروے سے اخذ ہونے والے نتائج انتخابات کے نتائج سے یکسر مختلف ہو سکتے ہیں تاہم شواہد بتاتے ہیں کہ اس وقت کوئی بھی پارٹی آئندہ عام انتخابات میں واضح برتری نہیں رکھتی۔

سروے سے یہ بھی اندازہ ہوا ہے کہ پی پی پی کو اپنا سیاسی اثر و رسوخ برقرار رکھنے کے لیے اتحادیوں کو ساتھ لے کر چلنا ہو گا اور یہ کہ حکمران جماعت اور ن لیگ کے درمیان روائتی لڑائی کی وجہ سے پی ٹی آئی سیاسی قوت بن کر ابھر رہی ہے۔

سروے سے اخذ کردہ نتائج کے مطابق، جو بھی آئندہ حکومت بنانے میں کامیاب ہوا اسے پارلیمنٹ میں مضبوط اپوزیشن کا سامنا رہے گا۔

Source: LUBP
 

اپنا تبصرہ بھیجیں