پیپلزپارٹی چھوڑکر (ن) لیگ میں جانیوالے اراکین اسمبلی کی نااہلی کیلئے الیکشن کمیشن سے رجوع کر نیکا اعلان

307967_471060189625785_2104516912_n

ن لیگ میں جانیوالے آرٹیکل62،63کے تحت نااہل ہو چکے ،آئندہ انتخابات میں حصہ نہیں لے سکیں گے، راجہ ریاض
پنجاب اسمبلی میں قا ئد حزب اختلا ف راجہ ریاض احمدنے پیپلزپارٹی چھوڑکر (ن) لیگ میں جانیوالے اراکین اسمبلی کی نااہلی کیلئے الیکشن کمیشن سے رجوع کر نیکا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی نے پارٹی امیدواروں کو ٹکٹ دیتے ہوئے ان سے وفاداری کا حلف لیا جس کی ویڈ یو موجود ہے ، الیکشن کمیشن میں پیش کریں گے ، پارٹی چھوڑ کر جانیوالے آرٹیکل 62/63کے تحت نااہل ہو چکے ہیں اور آئندہ انتخابات میں حصہ بھی نہیں لے سکیں گے۔ وہ ہفتہ کو پنجاب اسمبلی میں پیپلزپارٹی کے ڈپٹی پارلیمانی لیڈر شوکت بسراء کے ہمراہ پر یس کا نفر نس سے خطاب کر رہے تھے۔ راجہ ریاض احمدنے کہا ہے کہ پیپلزپارٹی چھوڑ کر جانیوالے اراکین اسمبلی کے پارٹی قیادت سے کوئی اختلاف نہیں تھے وہ اپنے حلقہ کے انتخابی سیاست کی وجہ سے (ن) لیگ میں شامل ہوئےمگر کسی کے چھوڑ نے سے پیپلزپارٹی کو کوئی فرق نہیں پڑیگا، پنجاب میں آئندہ حکو مت پاکستان پیپلزپارٹی کی ہو گی ۔
اس موقع پر پیپلزپارٹی کے رہنما شوکت بسرا اور ذکریا بٹ بھی موجود تھے ۔ راجہ ریاض نے مزید کہا کہ ان اراکین نے بے نظیر بھٹو کے خون کا سودا کیا ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ سوائے قیصر سندھو کے باقی سب اراکین کے متعلق ہم سب پہلے سے ہی کہہ چکے ہیں یہ اراکین اب پیپلزپارٹی سے منسلک نہیں رہے ۔فیصل آباد میں ہائیکورٹ بنچ کے قیام میں سب سے بڑی رکاوٹ وزیراعلیٰ شہبازشریف ہیں جبکہ ہم اس کے حق میں ہیں ۔ پیپلزپارٹی چھوڑ کر جانے والے اراکین پنجاب اسمبلی نے تاحال اپنی رکنیت سے استعفے نہیں دئیے ۔ عظمیٰ بخاری نے اب تک جتنی مراعات لی ہیں وہ سب کے سامنے ہیں مگر وہ پھر بھی بے نظیر شہید کے خون کا سودا کر کے مسلم لیگ ن میں چلی گئیں ہیں ۔پیپلزپارٹی کے ان اراکین کے مسلم لیگ ن میں جانے سے بلاول بھٹو یا فریال تالپور نے مجھ سے یا منظور وٹو سے کوئی جواب طلبی نہیں کی ۔ دریں اثنا وزیر اطلاعات قمر زمان کائرہ نے کہا کہ مسلم لیگ (ن)میں شامل ہونے والے ڈیڑھ سال قبل ہی پیپلز پارٹی چھوڑ چکے تھے ۔ (ن) لیگ والوں کو صدر کے دورہ لاہور سے تکلیف ہوئی اسی لئے یہ ڈرامہ رچایا گیا ،یہ سیاست کا حسن نہیں بدقسمتی ہے ۔مسلم لیگ (ن) کے غیر جمہوری اقدام کا جواب جمہوری اور سیاسی انداز میں دیں گے ۔ مسلم لیگ (ن) میثاق جمہوریت کی خلاف وزری اورپنجاب میں پاور پالیٹکس کر رہی ہے ۔عام انتخابات مقررہ وقت پر ہونگے ، وزیراعظم نے نگران سیٹ اپ کے لئے مشاورت کا عمل شروع کردیا ۔آن لائن کے مطابق قمرزمان کائرہ نے کہا کہ کہ ق لیگ کے ساتھ بعض قومی اسمبلی کی سیٹوں پر ڈیڈ لاک ہے جسے مذاکرات کے ذریعے طے کرلیا جائے گا اور اس میں شک نہیں وننگ سیٹیں انہیں ہی ملیں گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں