Mian Manzoor Wattoo demands govt to start Safe City Project from Lahore, Rawalpindi, Multan and Faislabad at the same time

10978486_1543830959217529_1994875937416713150_n
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President PPP Central Punjab, while commenting on the yesterday’s press conference of Punjab Chief Minister urged him to focus his attention on the indiscriminate implementation of the laws, already in the statute book since 1994, with political will and commitment. The pace of implementation is abysmal so far as is evident from the surge of heinous crimes in the province, he regretted.

He said that that the laws he was referring to were already in vogue but fault lied in the fair application of the same which still sounded a far-fetched cry as the people were suffering from the acute sense of insecurity. Their lives and properties continued to be at the mercy of criminals, he observed.

He pointed out that the law against wall chalking, misuse of speakers in mosques and hates speeches—was passed during the period of his Chief Ministership of Punjab and its implementation was ensured across the board.

People quote the exemplary implementation of laws then leading to controlling the monster of sectarianism and containing the illegal activities of the proscribed organizations those were engaged in bringing out processions quite frequently on Mall Road, Lahore, with Kalashnikovs. The province was made free of wall-chalking, he asserted.

He said that he directed the Law Minister of his cabinet to steer the passage of the private bill moved by opposition member S. A. Hameed adding he thus established best parliamentary democratic practices in the province in public interest by enacting the law based on the Bill moved by the opposition member.

He demanded of the Chief Minister to commence “Safe City Project” in Lahore, Multan, Rawalpindi and Faisalabad simultaneously to address the feelings of step- motherly treatment to a degree. He observed that discriminatory development strategy fuel frustration and helplessness among the people of the province.

He reiterated his demand regarding the establishment of the Provincial Finance Commission Award that would ensure the equitable distribution of provincial financial resources so important to bring the less developed areas at par to the developed regions of the province. The Commission should be mandated to distribute the financial resources of the province among all the districts based on the constituencies of National Assembly and the provincial Assembly in order to eliminate the impact of shenanigans of politics, he stated.

پیپلز پارٹی سنٹرل پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے آج یہاں سے جاری ایک بیان میں پنجاب کے وزیراعلیٰ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ لاؤڈ سپیکر کے غلط استعمال، وال چاکنگ اور نفرت پھیلانے والے لٹریچر کے پہلے سے نافذ العمل قوانین کے نفاذ پر پولیٹیکل ول سے توجہ دیں۔ انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ابھی تک اس ضمن میں انکی کارکردگی مایوس کن ہے کیونکہ صوبے میں سنگین جرائم میں دن بدن اضافہ ہو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ جن قوانین کا کل اپنی پریس کانفرنس میں حوالہ دے رہے تھے وہ انکے وزارت اعلیٰ کے زمانے میں اسمبلی سے پاس ہوئے تھے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ اپوزیشن کے رکن ایس اے حمید نے پرائیویٹ بل متعارف کروایا تھا جس پر انہوں نے اپنے وزیر قانون کو ہدایت دی تھی کہ اس قانون کو مفاد عامہ کے پیش نظر فورًا اسمبلی سے پاس کروایا جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن ممبر کے بل کو قانون بنا کر انہوں نے صوبے میں اعلیٰ پارلیمانی جمہوری روایت قائم کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ ان قوانین کو پاس کرانے کے علاوہ انکے نفاذ کو بلا امتیاز یقینی بنایا گیا جس سے فرقہ واریت، اسلحہ کی نمائش اور سارے صوبے میں وال چاکنگ کا مکمل خاتمہ کر دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہُ ان قوانین کے مثالی نفاذ کی لوگ آج بھی مثالیں دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ان قوانین کے نفاذ سے قبل لاہور میں مال روڈ پر مذہبی انتہاء پسند تنظیمیں کلاشنکوف اٹھائے اکثر جلوس نکالا کرتی تھیں۔انہوں نے وزیر اعلیٰ سے یہ بھی مطالبہ کیا کہ ’’سیف سٹی کا منصوبہ‘‘ لاہور، ملتان ،راولپنڈی اور فیصل آباد میں بیک وقت شروع کیا جائے تا کہ کسی حدتک سوتیلی ماں کے سلوک کے تاثر کا ازالہ ہو سکے۔انہوں نے کہا کہ امتیازی ترقیاتی حکمت عملی سے لوگوں میں مایوسی پھیلتی ہے۔ انہوں نے صوبائی فنانشل کمیشن ایوارڈ کے قیام کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اس سے تمام ضلعوں کے درمیان صوبے کے مالی وسائل کی تقسیم منصفانہ بنیادوں پر ہو سکے گی جس سے صوبے کے کم ترقی یافتہ علاقوں کو ترقی یافتہ علاقوں کے برابر لانے میں بڑی مدد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ کمیشن نیشنل اسمبلی اور پروونشل اسمبلی کے حلقوں کی بنیاد پر ترقیاتی فنڈز کی تقسیم کو یقینی بنائے

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں