Govt has given up to control load shedding: Tanvir Ashraf Kaira

IMG-20150302-WA0000

The fanfare announcement of Punjab Chief Minister regarding the commissioning of 1000 mw capacity power plant at Shaikhupura will meet the same ill-fate as was the case of building power plants in Okara and other locations adding with regret nothing has happened on ground as these only exist in the vivid memory of the people, said Tanvir Ashraf Kaira, Secretary General PPP Central Punjab, in a statement issued from here today.

He argued that the people no more take him and his words seriously, and were of the view that the power generation by the Shaikhupura surreal power project would remain a far-fetched cry like the disaster of Nandipur Power project that had turned out to be a white elephant of appalling proportion.

He observed that the Punjab Government under the Chief Minister was on the trajectory of enrolling itself in the Guinness Book of Record for not fulfilling its promises made to the people in proving relief by narrowing down the gap between demand and supply of electricity in months. The unabated yawing gap between demand and supply of electricity speaks volumes of the government’s inaptness, indifference and mismanagement, he added.

He heralded in the past that he would control the load shedding of electricity within months not years and now merely contended with by holding out new commitments after the lapse of two years. Who will believe his words now after what had happened to his similar tall claims made earlier, he asked?

He forewarned the people that they should be prepared to brace the load shedding of electricity they had not experienced yet in the coming summer season because this government had not added a single mw of electricity in the national grid. The albatross of circular debt of more than 550 billions rupees is also choking the government to paralysis, he argued.

Tanvir Ashraf Kaira said that the people do consider the period of PPP previous government much better than this because the load shedding of electricity was less than what they were facing today. It seems that the government has given up because it is not seen doing anything to rectify the situation, he stated.

He pointed out that the people’s patience would run out during this summer and they would protest right across the country to take on the government and that might put its future in jeopardy.

He said that the PPP government added more than 3000 mw in the national grid and was actively pursuing the mega projects for power generation but no progress had been reported since then except the platitudes by the representatives of this government.

پیپلز پارٹی سنٹرل پنجاب کے سیکریٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ نے آج یہاں سے جاری ایک بیان میں کہا ہے کہ پنجاب کی حکومت کے شیخوپورہ میں ایک ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کرنے کے پلانٹ کا بھی وہی حشر ہو گا جو کہ اوکاڑہ میں بجلی کے پراجیکٹ لگانے کا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اوکاڑہ کے منصوبے قصہ پارینہ ہو گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اب لوگ حکومتی وعدوں پر اعتبار نہیں کرتے اور کہا کہ شیخوپورہ کا پاور پلانٹ بھی اُسی طرح کچھ عرصے کے بعد بغیر بجلی پیدا کئے ہوا میں اڑ جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ نندی پور پاور پراجیکٹ اِس حکومت کا ایک بڑا سفید ہاتھی ثابت ہوا ہے جو اربوں روپے ہڑپ کر چکا ہے اور بند پڑا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ پنجاب کی موجودہ حکومت بجلی کی لوڈشیڈنگ ختم کرنے کا وعدہ پورا نہ کر کے گینیس بک آف ریکارڈ میں اپنا نام درج کروانا چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بلند بانگ دعووں کے باوجود موجودہ دور میں بجلی کی رسد طلب کے مقابلے میں مسلسل کم رہی ہے اور افسوس کہ یہ فرق دن بدن بڑھتا جا رہا ہے۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اسکو قابو کرنا حکومت کے بس کی بات نہیں ہے اور وہ مایوسی کے عالم میں ہاتھوں پر ہاتھ دھرے بیٹھی نظر آرہی ہے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ حکمرانوں نے سالوں میں نہیں بلکہ بجلی کی لوڈشیڈنگ مہینوں میں حل کرنیکا وعدہ کیا تھا لیکن اب مسئلے کو حل کرنیکی بجائے صرف بیانات سے کام چلانے کی ناکام کوششیں کر رہے ہیں۔انہوں نے لوگوں کو پیشگی وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ اس موسم گرما میں اس قدر لوڈشیڈنگ ہو گی جسکا انہوں نے پہلے کبھی تجربہ نہیں کیا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کے صبر کا پیمانہ لبریز ہو جائے گا اور لوگ سراپا احتجاج ہونگے جن کو روکنا اِس حکومت کے بس کی بات نہیں ہو گی۔انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی پچھلی حکومت نے اپنے دور میں 3400 میگا واٹ بجلی نیشنل گرڈ میں شامل کرنے کے علاوہ اور بڑے بڑے منصوبے شروع کر رکھے تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ افسوس کہُ اس وقت سے اُن منصوبوں پر کوئی پیشرفت نظر نہیں آرہی۔ انہوں نے کہا کہ یہ موجودہ حکمران 2017 میں بجلی کی لوڈشیڈنگ ختم کرنے کی جو بات کر رہے ہیں وہ صحیح معلوم نہیں ہوتی۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں