پیپلز پارٹی کا سرکاری ملازمین کا کرونا ٹیسٹ لازمی کرانے کا مطالبہ

اسلام آباد : پاکستان پیپلز پارٹی نے کروناء وبا کے پھیلاؤ کے پیش نظر حکومت سے سرکاری ملازمین اور کاروباری شعبہ سے وابستہ افرادکا کرونا ٹیسٹ لازمی کرانے کا مطالبہ کیا ہے.

پاکستان پیپلز پارٹی کے سیکرٹری جنرل سید نیر حسین بخاری نے کہا ہے کہ کرونا وبا کے شروع میں ہی چیئرمین بلاول بھٹو نے وفاقی حکومت کی لاپرواہی اور غلط پالیسی پر انتباہ کر دیا تھا پیپلز پارٹی کا واضح موقف تھا کہ مربوط پالیسی اختیار نہ کی گئی تو ہسپتالوں میں مریضوں کیلیے جگہ نہیں رہے گی لیکن بے حس حکمران نہیں مانے.

نیر بخاری نے کہا کہ پیپلز پارٹی مطالبہ کرتی ہے کہ کرونا کے مزید پھیلاؤ اور انسانیت کے تحفظ کی خاطر سرکاری ملازمین اور کھولے گئے کاروبار سے وابستہ افراد کا کرونا ٹیسٹ لازمی قرار دیا جائے نیر بخاری نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی دفاتر اور کاروبار کھلنے کے شہریوں کی ملک بھر میں آمد ورفت شروع ہوگی.

نیر بخاری نے کہا کہ بڑے شہروں میں کرونا وباء تناسب خطرناک حد سے زائد ہے وفاقی صوبائی دفاتر کھلنے سے لاکھوں افراد بغیر کرونا ٹیسٹ اسلام آباد لاہور کراچی پشاور کوئٹہ واپس آییں جایینگے نیر بخاری نے مزید کہا کہ وزیراعظم کا کرونا کے ساتھ جینے مرنے کا اعلان عوام دشمنی کے مترادف ہے ،لوگوں کی زندگیاں کرونا کے حوالے کرنے کا اعلان شیرو اور ٹاییگر زہنیت کی عکاسی ہے .

نیر بخاری نے سوال کیا ہے کہ تبدیلی لانیوالوں کو الٹی گنگا بہانے کے محاورے کا مطلب سمجھ آگیا یاکہ ابھی کچھ باقی ہے اہم حکومتی زمہ داران کرونا میں مبتلا ہونے کے باوجود شیخ چلی دوئم وزیراعظم کورونا کوپشاورکی بی آر ٹی تعمیر کی طرح کا مزاق سمجھ رہے ہیں.

انہوں نے کہا کہ میڈیا رپورٹس اور آزاد زرائع کے مطابق صرف لاہور کیچھ لاکھ سے زائد شہری کرونا خطرے میں ہیں وفاقی دارلحکومت اسلام آباد کے مختلف علاقے کرونا وباء سے متاثرہ ہیں نیر بخاری نے کہا کہ احتیاطی تدابیر اختیار نہ کرنے سے کرونا پھیلاؤ کا شدید خطرہ ہے جس سے نمٹنے مییں حکومت پہلے ہی غیر سنجیدگی کا عملی مظائرہ کر رہی ہے۔

کیٹاگری میں : خبر

اپنا تبصرہ بھیجیں