پیپلز پارٹی کی منہاج القران کے دفتر پر پولیس گردی اور نہتے لوگوں پر گولیاں برسانے کی شدید مذمت

2196

کراچی :پاکستان پیپلز پارٹی میڈیا سیل کے انچارج سینیٹر سعید غنی،ممبران حبیب الدین جنیدی ، لطیف مغل ، ذوالفقار قائم خانی اور منظور عباس نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ پنجاب حکومت کے ایماء پرتحریک منہاج القران کے دفتر پر پولیس گردی نے آمر ضیاء کے دور حکمرانی کی یاد تازہ کردی ہے، وزیراعظم قوم سے معا فی مانگیں اور وزیر اعلیٰ پنجاب مستعفی ہو جائیں، ملک نازک دور سے گزر رہا ہے طاہرالقادری فساد کے بجائے پر امن احتجاج کا راستہ اختیار کریں ، جمہوریت کا نقصان وفاق پاکستان کے حق میں نہ ہوگا ۔ پی پی پی میڈیا سیل سے جاری کردہ بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی لاہور میں منہاج القران کے دفتر پر پولیس گردی اور نہتے لوگوں ؂پر گولیاں برسانے کی شدید مذمت کرتی ہے ،پولیس تشدد میں جاں بحق افراد کے لواحقین اور زخمیوں سے اظہار ہمدردی کرتی ہے۔ پنجاب حکومت کے اس ظالمانہ رویہ کی جتنی مذمت کی جائے وہ کم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک بار پھر ثابت ہوگیا ہے کہ تخت لاہور کے حکمران خاندان جمہوری روایات و اقدار کا خائف ہی نہیں منکر بھی ہے۔ اس طرح کے شرمناک عمل میں ملوث حکمران کو تاریخ خادم اعلی نہیں بلکہ ظالم اعلی کے طور پریاد رکھے گی ۔ایک طرف حکومت دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کررہی ہے تو دوسری طرف خود سرکاری مشینری کے ذریعے مخالفین کو دہشت گردی کا نشانہ بنایاجارہا ہے آزادی اظہار و اختلاف کے سوا حقیقی جمہوریت قائم نہیں ہوسکتی ۔آئین پاکستان اپنے ہر شہری کو پرامن احتجاج کا حق دیتا ہے جسے حکمران اپنے مفادات کی خاطر معطل یا رد نہیں کرسکتے۔طاہر القادری سے خوف زدہ تخت لاہور کا حکمران خاندان ایسی اوچھی حرکتیں نہ کریں جس سے جمہوریت و جمہوری اقدارکو نقصان ہو۔پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے اپنے بیان میں زور دیتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر طاہر القادری اس طرح کا کوئی عمل نہ کریں جس سے جمہوریت کو نقصان ہو،ملک کو فساد و شر نہیں بلکہ افہام وتفہیم کی ضرورت ہے ۔ ملک میں جاری اندرونی اور بیرونی کشیدگی اور دہشت گردوں کے خلاف فوجی آپریشن کے باعث قومی ہم آہنگی

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں