میاں منظور وٹوکا پی ٹی آئی کے الزامات کی عدالتی تحقیقات کا مطالبہ

537d7b2a07281

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پی ٹی آئی نے بعض حلقوں کے نتائج کو موجودہ حکومت کی ضروریات کے مطابق ڈھالنے کے الزامات کی عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے جو اس وقت ایک انفارمیشن ٹیکنالوجی یونیورسٹی میں مبینہ طور پر کی جا رہی ہے۔ یہ بات انہوں نے نیویارک میں جناب اعجاز چوہدری پیپلز پارٹی امریکہ کے اہم لیڈر اور پارٹی کے کارکنوں سے باتیں کرتے ہوئے کہی۔ اس موقع پر پیپلز پارٹی لاہور کے رہنما مصباح الرحمن بھی موجودہ تھے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ حکومت کو شروع ہی سے 4حلقوں میں ووٹوں کی تصدیق کے مطالبے کو تسلیم کر لینا چاہیے تھا۔ لیکن حکومت کی میں نہ مانوں کی پالیسی کی وجہ سے ملک کی سیاسی فضاء میں خطرناک سیاسی ماحول پیدا ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی ہیلے بہانوں کی وجہ سے دال میں کچھ کالے کا تاثر عام ہو رہا ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے سابق صدر آصف علی زرداری کے حالیہ بیان کو سراہتے ہوئے کہا جسمیں سابق صدر نے وزیراعظم کو کہا ہے کہ وہ منتخب وزیراعظم کی طرح عوام کے مسائل کے حل کی طرف توجہ دیں نہ کہ بادشاہ جو عوام کی خواہشات اور امنگوں سے مبرّا ہوتا ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے موجودہ حکمرانوں پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے تاریخ سے کوئی سبق نہیں سیکھا ہے اور اُنکا وہی وتیرا ہے جو پہلے تھا۔ انہوں نے خاندانی طرز حکومت کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ایسا طرز حکمرانی جمہوری اقدار کے سراسر منافی ہے۔ انہوں نے مسلم لیگ کی حکومت کی عوام دشمن پالیسیوں کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ انکی وجہ سے عوام کو ریلیف کی بجائے تکلیف دی جارہی ہے۔ پیپلز پارٹی ایسی پالیسیوں کی حمایت کرنے کی متحمل نہیں ہو سکتی جو عوامی فلاح و بہبود سے عاری ہو۔ پیپلز پارٹی عوامی جماعت ہے اور عوامی سیاست پر یقین رکھتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بجلی اور گیس کی لوڈشیڈنگ کے علاوہ بگڑتی ہوئی امن عامہ کی صورتحال غذائی اشیاء کی کمر توڑ مہنگائی، غربت، صحت اور تعلیم کی سہولتوں کے فقدان نے جینا حرام کر دیا ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پنجاب کے وزیراعلیٰ اپنی کامیابیوں کو ٹیکس دہندگان کے پیسوں کے ذریعے اشتہاری مہم پر اربوں روپے خرچ کر رہے ہیں جبکہ انکی کامیابیوں کے ریکارڈ نندی پور پاور پراجیکٹ کی تباہی نے مسمار کر دئیے ہیں۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی جمہوریت پر ایمان کی حد تک یقین رکھتی ہے۔ پیپلز پارٹی ایسی جماعت کی حمایت نہیں کر سکتی جو عوام دشمن پالیسیوں پر عمل پیرا ہو۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں