میاں منظور احمد وٹو کی قیادت میں گجرانوالہ ڈویثرن میں آئی ڈی پیز کے لیے عطیات کی زبردست مہم

10530700_844041135619996_2967045660535594693_n
10559843_844043588953084_7387572530385454839_n
10480161_493306727470233_5034964069429563280_n
10364052_493306794136893_8528106685284484229_n

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو کی قیادت میں گجرانوالہ ڈویثرن میں آئی ڈی پیز کے لیے عطیات کی زبردست مہم شروع ہوئی جسمیں ڈیڑھ کروڑ روپے سے زائد عطیات کے گجرانوالہ سٹی اور گجرانوالہ ڈویثرن کے عہدیداران کی طرف سے کئے گئے۔ جسمیں گجرانوالہ سٹی 50لاکھ روپے، ڈسٹرکٹ گجرانوالہ 50لاکھ، ڈسٹرکٹ مندی بہاؤاالدین 25لاکھ، ڈسٹرکٹ گجرات 25لاکھ، ڈسٹرکٹ سیالکوٹ 25لاکھ، نارووال اور حافظ آباد 10و10لاکھ روپے کے اعلانات شامل ہیں۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ گجرانوالہ سٹی اور ڈویثرن میں اتنے بڑے آئی ڈی پیز کے لیے عطیات کا اعلان کر کے چےئرمین بلاول بھٹو کے ساتھ زبردست وفاداری کا اظہار کیا ہے اور انہوں نے ثابت کیا ہے کہ وہ انکی ہدایات پر بڑھ چڑھ عمل کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ چےئرمین بلاول بھٹو ملک کے پہلے لیڈر تھے جنہوں نے دہشتگردی اور انتہا پسندی کے خلاف ایک توانا آواز اٹھائی اور کہا کہ ہم انکا عوام کی طاقت سے مکمل قلعہ قمہ کر کے پاکستان کو امن کا گہوارہ بنائیں گے۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ آج تمام سیاسی قیادت بلاول بھٹو کے موقف کی تائید کرتے ہوئے وزیرستان میں ملٹری آپریشن کی حمایت کر رہی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی قومی سیاست کر رہی ہے جس کے دو واضح مقاصد ہیں جسمیں اولاً پارٹی پاکستانی فوج کے پیچھے سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑی ہے تا کہ دہشتگردی اور انتہا پسندی کو منطقی انجام تک جلد از جلد پہنچایا جائے۔ دوسرے ہم جمہوریت کے استحکام اور اسکی مضبوطی کے لیے تمام اقدامات کر رہے ہیں لیکن پیپلز پارٹی موجودہ حکومت کے غلط اقدامات کی ہرگز حمایت نہیں کریگی۔ انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے اپنی وزارت اعلیٰ کے زمانے میں نواز شریف کی رہائش سے تجاوزات ہٹائی تھیں لیکن اس سارے آپریشن میں چڑیا نے پر بھی نہ مار اتھا، لیکن شہباز شریف نے طاہرالقادری کی رہائش گا ہ پر تجاوزات ہٹانے کے لیے جس پولیس گردی کا مظاہرہ کیا اس میں 14قیمتی جانیں ضائع ہوئیں اور تقریباً 100لوگ زخمی ہوئے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پاکستان مسلم لیگ(ن) اور پی ٹی آئی آپس میں لڑتے رہیں لیکن پیپلز پارٹی ایک منصوبہ بندی کے تحت کام کر رہی ہے جسمیں تنظیم سازی کو بڑی اہمیت حاصل ہے۔ انہوں نے اس یقین کا اظہار کیا کہ پیپلز پارٹی آئندہ نہ صرف صوبے میں بلکہ مرکز میں بھی حکومت بنائے گی۔ اس سے قبل پیپلز پارٹی کے سیکرٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو مالاکنڈ آپریشن کے دوران 30لاکھ آئی ڈی پیز پیپلز پارٹی کے دور میں عزت اور آبرو کے ساتھ تین مہینے کے بعد اپنے گھروں میں چلے گئے تھے لیکن وزیرستان کے آئی ڈی پیز کی حکومت کو کوئی پرواہ نہیں ہے لیکن پیپلز پارٹی انکو تنہا نہیں چھوڑے گی۔ اس موقع پر امتیاز صفدر وڑائچ، نواب شیر وسیر، طارق گجر اور ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان بھی موجود تھیں ۔ اسد اللہ بابا جس نے افطار ڈنر کا اہتمام کیا تھا اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہاکہ وہ چےئرمین بلاول بھٹو اور کو چےئرمین آصف علی زرداری کی قیادت میں پیپلز پارٹی کے لیے بڑی سے بڑی قربانی دینے سے بھی دریغ نہیں کریں گے۔ انہوں نے پنجاب پیپلز پارٹی کے صدر اور سیکرٹری جنرل کا شکریہ ادا کیا اور خاص کر میاں منظور احمد وٹو کا جو کل ہی امریکہ سے لوٹے ہیں اور آج انہوں نے افطار ڈنر میں شرکت کر کے انکی بڑی حوصلہ افزائی کی ہے۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں