اسلام آبادمیں آرٹیکل245 کانفاذ واپس نہ لیا تواحتجاج میں سب کوپیچھے چھوڑدیں گے، خورشید شاہ

حکومت نجانے کیوں تحریک انصاف اور طاہر القادری سے خوفزدہ ہے، خورشید شاہ فوٹو: فائل

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ کا کہنا ہے کہ اسلام آباد میں دفعہ 245 کا نفاذاور فوج کی طلبی منی مارشل لا اور حکومت کی ناکامی ہے۔ اگر حکومت نے آرٹیکل 245 کے نفاذ کا حکم واپس نہ لیا تو پیپلزپارٹی احتجاج میں سب کو پیچھے چھوڑ دے گی۔ 

قومی اسمبلی میں اسلام آباد میں دفعہ 245 کے نفاذ پر بحث کے دوران قائد حزب اختلاف کا کہنا تھا کہ آئین میں فوج بلانے کی شق موجود ہے، پیپلز پارٹی نے بھی ماضی میں مالاکنڈ میں فوج بلائی کیونکہ اس وقت وہاں جنگ کے حالات تھے لیکن اس سے قبل ہم نے پارلیمنٹ کو اعتماد میں لیا۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کو اسلام آباد میں دفعہ 245 کے نفاذ پر اعتراض نہیں لیکن ایوان کو اس کی وجہ بھی بتائی جائے کیونکہ اسلام آباد ایک چھوٹا شہر ہے یہاں حالات معمول کے مطابق ہیں، اس سے زیادہ برے حالات تو پشاور میں ہیں۔

پیپلز پارٹی کے رہنما کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی نے ماضی میں بھی جمہوریت کے لئے قربانیاں دی ہیں اور اب بھی اگر جمہوریت کو خطرہ ہوا تو سر پر کفن باندھ کر میدان میں نکلیں گے لیکن جمہوریت کا مطلب حکومت بچانا نہیں ہونا چاہیئے۔ اداروں کی آڑ میں سیاست کرنے نہیں دی جائے گی۔   آرٹیکل 245 فوری واپس لیا جائے حکومت اگر آرٹیکل 245کے نفاذ کا حکم واپس لے لے تو پوری طرح حکومت کا ساتھ دیں گے اور اگر یہ  فیصلہ واپس نہ لیا گیا تو پیپلزپارٹی احتجاج میں سب کو پیچھے چھوڑ دے گی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت نجانے کیوں تحریک انصاف اور طاہر القادری سے خوفزدہ ہے۔ تحریک انصاف کے کارکنوں کو اسلام آباد آنے دیا جائے وہ اسلام آباد میں 2، 4 یا زیادہ سے زیادہ 6 دن بیٹھیں گے۔

Source: Express News

اپنا تبصرہ بھیجیں