حکومت کی نااہلی، پی ٹی آئی اور پی اے ٹی کی سیاسی انتہاء پسندی سے جمہوریت کو سنگین خطرات لاحق ہو گئے ہیں۔ تنویر اشرف کائرہ

dsc_0075

حکومت کی نااہلی اور سستی ، پی ٹی آئی اور پی اے ٹی کی سیاسی انتہاء پسندی کی وجہ سے ملک کے سیاسی حالات اس نہج پر پہنچ گئے ہیں کہ جس سے آئین پاکستان ، جمہوریت اور قانون کی عملداری کو سنگین خطرات لاحق ہو گئے ہیں۔ یہ بات پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے سیکرٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ نے آج یہاں سے جاری ایک بیان میں کہی۔انہوں نے کہا کہ ستم ظریفی یہ ہے کہ موجودہ حکومت حالات کی سنگینی کو سمجھ ہی نہیں سکی اور راست اقدام اٹھانے میں دیر کی وجہ سے حالات مزید خراب ہو گئے ہیں۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ حالات کو قابو میں لانے کے حالیہ حکومتی اقدامات جو بوکھلاہٹ میں اٹھائے گئے اُن سے حالات بد سے بدتر ہوگئے ہیں۔ تنویر اشرف کائرہ نے بوجھل دل کے ساتھ کہا کہ ہمارے سر شرم سے جھک جاتے ہیں جب اقوام عالم ٹی وی سکرین پر ہماری سیاسی پارٹیوں کو ایکدوسرے سے دست و گریباں ہوتے ہوئے دیکھتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان سیاسی جماعتوں کے قائدین کے کردار سے جمہوری رویے کی رتی بھر بھی نظر نہیں آتی۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے پچھلی حکومت نے اپنی آئینی مدت مفاہمت اور مصالحت کی پالیسی کی بدولت مکمل کی جنکو عملی جامہ سابق صدر آصف علی زرداری اور سابق وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے پہنایا۔ انہوں نے کہا کہ حالانکہ پیپلز پارٹی کی حکومت ایک مخلوط حکومت تھی جس پر عدم اعتماد کی تلوار ہر وقت لٹکتی رہتی تھی لیکن پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت کی فہم و فراست کی وجہ سے حکومت نے نہ صرف اپنی آئینی مدت پوری کی بلکہ اقتدار ایک حکومت سے دوسری حکومت کو بڑے پر وقار طریقے سے منتقل کیا ۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی جمہوری حکومت ہمیشہ اپوزیشن پارٹیوں سے اہم معاملات پر مشاورت بھی کرتی تھی اور اُنکو اعتماد میں بھی لیتی تھی جسکی وجہ سے ملکی سیاسی فضاء تقریباً سازگار رہی۔ انہوں نے کہا کہ آئین میں متفقہ ترامیم اور تقریباً98 فیصد بلوں کا پارلیمنٹ میں متفقہ طور پر پیش ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ اسوقت کی حکومت اپوزیشن کو قانون سازی اور کاروبار سلطنت میں کس حد تک شریک کرتی تھی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں