Mian Manzoor Wattoo says PPP will defend democracy at all cost

218860_l
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President Punjab PPP, while appreciating the efforts of Imran Khan for ensuring fair, free and transparent elections also disapproved the use of unparliamentarily words in his speeches against the leaders of the other political parties. Transparency and social development are intertwined, he said this in a statement issued from here today.

He said that Imran Khan was a leader of national stature and should treat other leaders with equal respect based on tolerance, decency and dignity. His tone and tenor against other political leadership is not measuring up to a national leader, he observed.

He reminded that the Punjab Chief Minister Shahbaz Sharif started this practice as he broke the record of using the derogatory language against the political opponents especially during the last PPP led coalition government.

He said that that FIR of murders cases of PAT workers in Model Town should be registered adding that the Chief Minister Punjab should also resign on his criminal negligence being the chief executive of the province.

Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that the proposal of PTI Chief regarding the incumbent Prime Minister’s conditional stepping down for a month should be given serious consideration by the government after taking into account its admissibility in the constitution. The new leader of the House of the ruling Party could be elected who would quiet the office of the Premiership if rigging is not proved during the period, he added.

He suggested to the government to focus on this proposal and strive to extricate the country from the quagmire of prevailing political deadlock that had been causing huge losses to the economy due to nosedive of stock market, shrinking of foreign exchange reserves, depreciation of value of rupee, postponement of the meeting with IMF and above all the image of the country the world over.

Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that fair, free and transparent elections were the basis on which strong edifice of democracy could be built adding rigged elections scuttle the very purpose of the whole electoral process. Manipulated mandate hits the bed rock of the whole political system, he observed.

He regretted that elections in Pakistan had always been mostly conducted with the prior determination as who would win and who would loose. PPP had been the victim of such elections, he maintained.

He reiterated that PPP would defend democracy and ensure its constitution at all cost as the Party had given countless sacrifices for it. Democracy is non- negotiable for the PPP and its leadership alike, he asserted.

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے آج یہاں سے جاری ایک بیان میں تحریک انصاف کے چےئرمین عمران خان کی اُن کاوشوں کو سراہا جو کہ وہ آزادانہ، منصفانہ اور شفاف انتخابات کرانے کے ضمن میں کر رہے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ سماجی ترقی اور شفافیت کا آپس میں گہرا تعق ہے۔ انہوں نے چےئرمین کی اُن تقاریر کو ناپسندیدہ قرار دیا جسمیں دوسرے سیاسی قائدین کے خلاف غیر پارلیمانی الفاظ استعمال کئے گئے تھے۔انہوں نے مزید کہا ک عمران خان ایک قومی لیڈر ہیں اُنکو دوسرے سیاسی قائدین کو بھی عزت اور شائستگی سے پیش آنا چاہیے۔ انکا حالیہ رویہ اس حوالے سے قومی لیڈر کے شایان شان نہیں تھا۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے پیپلز پارٹی کی پچھلی جمہوری حکومت کے دوران سیاسی مخالفین کے خلاف غیر شائستہ زبان استعمال کرنے کی حدوں کو چھوا جو کسی لحاظ سے بھی قابل معافی نہیں ۔ انہوں نے کہاکہ ماڈل ٹاؤن کے سانحہ میں پی ٹی آئی کے کارکنوں کے قتل کے مقدمے کی ایف آئی آر درج ہونی چاہیے اور وزیراعلیٰ پنجاب کو اس مجرمانہ غفلت پر استعفیٰ دے دینا چاہیے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پی ٹی آئی کی اس تجویز پر حکومت کو پوری سنجیدگی سے غور کرنا چاہیے جسمیں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم ایک مہینے کے لیے استعفیٰ دے دیں اور اگر اس دوران دھاندلی ثابت نہ ہو تو وہ پھر وزیراعظم پاکستان بن جائیں۔ انہوں نے کہا کہ اس تجویز کے آئینی پہلوؤں کا جائزہ لینے کے بعد اس کو قابل عمل بنانا چاہیے تاکہ ملک کو سیاسی دلدل سے نکالا جا سکے جسکی وجہ سے ملک کی معیشت کو ناقابل تلافی نقصان ہو رہا ہے، سٹاک مارکیٹ کریش کر گئی ہے، زر مبادلہ کے ذخائر کم ہو رہے ہیں، روپے کی کی قیمت گر رہی ہے، آئی ایم ایف کے ساتھ میٹنگ ملتوی ہو گئی ہے اور سب سے بڑھ کر دنیا میں ملک کا امیج بری طرح متاثر ہو رہا ہے۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ شفاف اور غیر جانبدارانہ اور منصفانہ انتخابات کے بغیر جمہوریت ملک میں تناور نہیں ہو سکتی۔انتخابات میں دھاندلی آئین اور جمہوریت کے مقاصد کی نفی کرتی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ کتنی ستم ظریفی کی بات ہے کہ پاکستان میں زیادہ تر انتخابات اس بنیاد پر ہوئے ہیں کہ انتخابات میں کون جیتے گا اور کون ہارے گا اور پیپلز پارٹی ایسے انتخابات کی ڈسی ہوئی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی ہر قیمت پر آئین اور جمہوریت کا دفاع کرے گی کیونکہ اسکے لیے اس نے بے شمار قربانیاں دی ہیں۔جمہوریت اور پیپلز پارٹی کو ایک دوسرے سے علیحدہ نہیں کیا جا سکتا، انہوں نے کہا۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں