Mian Manzoor Ahmed Wattoo condoles with the family of rain victim

10599234_664521846987973_4414689568331894898_n
10177491_445470245590736_3310010492602763587_n
10482427_445477728923321_6362470265238956866_n
10523904_445476675590093_730337460344058244_n
10687073_445474278923666_6632755429651262181_n
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President Punjab PPP, accompanied by Secretary General Tanvir Ashraf Kaira, Presidetnt PPP Lahore Smaina Khalid Gurkhi,Aziz-ur- Rehman Chann, Dewan Mohyuddin,Aurungzeb Burki, Abid Siddique and Rana Asher, went to Chah Miran, Misri Shah ,today to condole the death of six family members who died due to the collapse of the roof as a result of heavy rain in Lahore.
The PPP President Punjab and the office bearers extended their deep condolences over the loss of precious life and prayed to Allha for the eternal peace to the departed souls and fortitude to the bereaved family to bear the irreparable loss.
PPP President also extended financial help to the family that may help to a degree for its rehabilitation.
While talking to media present there Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that the Punjab Chief Minister instead of availing the photo op while standing in the rain water wearing Wellington shoes should take pre-emptive measures for the earliest disposal of the heavy rain waters, the root cause of woes for the poor.
He regretted that each time after the heavy rain the Chief Minister Punjab repeat the platitude with no follow up action to mitigate the miseries of the poor people living in the densely populated areas of the metropolis.
He further said that the Chief Minister would always order the punitive action against the poor WASA employees to use them as the smoke screen to hide his inaptness and negligence. His micro management is limitless, he added.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo observed that the track record of such heavy rains would reveal the same utterances of the Chief Minister with tall promises but no policy till the tragedy strikes again. This is unforgiving and tantamount to rude joke to the poor, he added.
Mian Mian Manzoor Ahmed Wattoo suggested that the government should figure out a mechanism assigned to carry out the evolution of each household in the poor localities with a view to revamp the structures to minimize the damages to life and property.
The government should carry out the necessary repair of the houses at government’s expense those are declared dangerous for residential purposes.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo pointed out that the victim family expressed their disgust over the performance of the RESCUE1122 that never reached the site and the people of the locality helped them in the difficult times.
The victim family members were of the firm view if the RESCUE 1122 had arrived in time the loss of lives would have been minimum.

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو آج یہاں مصری شاہ لاہور کے علاقہ چاہ میراں گئے جہاں انہوں نے اس خاندان سے دلی تعزیت کی جن کے 6 لوگ حالیہ بارشوں کی وجہ سے چھت گرنے سے جاں بحق ہو گئے تھے۔ میاں منظور احمد وٹو کے ہمراہ تنویر اشرف کائرہ، ثمینہ خالد گھرکی، عزیز الرحمن چن، دیوان محی الدین، اورنگزیب برکی، عابد صدیقی اور رانا اشعر تھے۔صدر پیپلز پارٹی اور انکے ہمراہ پیپلز پارٹی کے عہدیداروں نے سوگوار خاندان کی دلی تعزیت کی اور جاں بحق ہونے والوں کے بلند درجات کے لیے دعا کی اور کہا کہ اللہ تعالیٰ سوگوار خاندان کو اس ناقابل تلافی نقصان برداشت کرنے کا حوصلہ عطا کرے۔ میاں منظور احمد وٹو نے متاثرہ خاندان کی مالی امداد بھی کی جو کسی حد تک انکی بحالی میں مددگار ثابت ہو گی۔ اس موقع پر میڈیا سے باتیں کرتے ہوئے میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پنجاب کے وزیر اعلی بارشوں کے بعد ہر دفعہ ولنگٹن (Wellington)جوتے پہن کر بارش کے پانی میں کھڑے ہو کر تصویر کچھوانے کے بعد شہریوں کو آئندہ نجات دلانے کے بلند بانگ دعوے کرتے ہیں جو صرف دعوے ہی رہتے ہیں کیونکہ اگلی بارش میں بھی ایسا ہی ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب اپنی نااہلی کو چھپانے کے لیے واسا کے ملازمین کی خوب سرزنش کرتے ہیں اور یہ صرف اپنی حکومت کی نالائقی چھپانے کے لیے کیا جاتا ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے تجویز کیا کہ حکومت ایک ایسا میکنیزم بنائے جو کہ بوسیدہ اور خطرناک مکانوں کی لسٹ تیار کرے اور جو مکان رہائش کی خطرناک لسٹ میں آئیں انکی بروقت مرمت کر دی جائے تا کہ مالی اور جانی نقصان کم سے کم ہو۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ سوگوار خاندان نے ان سے ریسکیو 1122 کی شکایت کی ہے کہ انکی کارکردگی انتہائی مایوس کن ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ریسیکو 1122بروقت پہنچ جاتا تو سوگوار خاندان کا جانی نقصان کم ہوتا۔انہوں نے کہا کہ ان متاثرہ خاندان کی مدد صرف اہل محلہ نے کی، حکومت کی طرف سے مصیبت کی گھڑی میں کوئی نہیں پہنچا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں