Mian Manzoor Wattoo says judiciary should not be dragged in political domain‏

201210182548_samaa_tv
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President Punjab PPP, while talking to a delegation of youth said that it was not appropriate to drag judiciary in the political disputes. Political issues should be resolved by the political parties with the spirit of accommodation rather than resorting to brinkmanship, he added.
A delegation of Punjab People’s Youth called on Mian Manzoor Ahmed Wattoo here today under the leadership of Suhail Milk , Coordinator of Punjab People’s Youth.
Mian Manzoor Ahmed wattoo while responding to their questions added that the present crisis was the product of the wrong policies of the present government and therefore it shared the major responsibility for its resolution.
He said that if the PML(N) government had accepted the demands of Imran Khan earlier regarding the opening of the four constituencies of Lahore the present political crisis would have not surfaced in the first place.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo mentioned that the use of brutal force by the Punjab Chief Minister in the Model Town incident killing fourteen PAT workers triggered the wave of anger against the government right across the country. The condemnation of the incident by all sections of society reduced the credibility of the government to the lowest ebb he observed.
The situation further aggravated when the government functionaries refused the registration of FIR against the culprits under the garb of one pretext or another.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo argued that the government would have been on high moral ground if the Chief Minister had resigned over the abhorrent incident. It exploded in the face of his so called good governance of Punjab Chief Minister.
He reminded that the Chief Minister should honour his commitment of resigning from the highest office of the Punjab Government as the Judicial Commission had held him responsible for the Model Town incident.
He reiterated that the Government had to grant “safe passage” to Imran Khan and Dr. Tahir-ul- Qadari to end the stalemate that had been keeping the nation as its hostage for the last four weeks.
He urged the PTI and PAT leadership to create a degree of flexibility in their maximal position that might precipitate the efforts to find a win win face saving situation.
He expressed the resolve of the Party for upholding the cause of the constitution and democracy because these were the legacies of the Party leadership and therefore non- negotiable.
He reiterated that the Party would continue the struggle for the empowerment of the poor people of the country and would not rest till the culmination of the ultimate objective that harmonized with Party’s political philosophy.

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے کہا ہے کہ عدلیہ کو سیاسی مسائل کے حل کے لیے استعمال نہیں کرنا چاہیے اور سیاسی مسائل سیاسی جماعتوں کو ہی حل کرنے چاہئیں۔ انہوں نے یہ بات پنجاب پیپلز یوتھ کے ایک وفد سے باتیں کرتے ہوئے کہی جس نے آج یہاں سہیل ملک، چیف کوآرڈینیٹر پنجاب پیپلز یوتھ کی قیادت میں میاں منظور احمد وٹو سے ملاقات کی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ سیاسی بحران حکومت کی غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہے۔ اگر حکومت عمران خان کے 4 حلقوں کے ووٹرز کی تصدیق کے مطالبے کو تسلیم کر لیتی تو موجودہ صورتحال پیدا ہی نہ ہوتی۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ ماڈل ٹاؤن کے سانحہ میں 14 پاکستان عوامی تحریک کے کارکن جاں بحق ہوئے جس سے سارے ملک میں حکومت کے خلاف غم و غصہ کی لہر پھیل گئی جس نے حکومت کی ساکھ کو بری طرح متاثر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی حالات مزید خراب ہوئے جب حکومت نے ملزموں کے خلاف ایف آئی آر کا اندراج نہ ہونے کے لیے مختلف ہتھکنڈے استعمال کئے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اخلاقی بلندیوں پر ہوتی اگر وزیراعلیٰ پنجاب اس واقعہ پر مستعفی ہو جاتے اور اپنا مقدمہ قانون کی عدالت میں لڑتے۔ایسا نہ کرنا انکی گڈ گورننس کے منہ پر طمانچہ تھا۔ میاں منظور احمد وٹو نے وزیرعلیٰ پنجاب کو انکا وعدہ یاددلایا جسمیں انہوں نے کہا کہ کہ اگر جوڈیشل کمیشن نے انکو قصور وار ٹھہرایا تو وہ اپنے عہدے سے مستعفی ہو جائیں گے۔ جوڈیشل کمیشن نے اس واقعہ کی ذمہ داری ان پر عائد کی ہے اس لیے اب انہیں اپنا وعدہ پورا کرنا چاہیے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ حکومت کو عمران خان اور ڈاکٹر طاہرالقادری کو ’’سیف پیسج‘‘ دینا چاہیے تا کہ ملک کو اس سیاسی بحران سے نجات ملے اور عوام سکھ کا سانس لے جو کہ پچھلے کئی ہفتوں سے سولی پر لٹکی ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان عوامی تحریک اور پاکستان تحریک انصاف کی جماعتوں سے بھی اپیل کی کہ وہ اپنے موقف میں نرمی پیدا کریں تا کہ اس مشکل کو حل کرنے کے لیے کامیاب کوششیں دوبارہ شروع کی جاسکیں۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی جمہوریت اور آئین کی پاسداری کی اعلیٰ روایات کا ہرقیمت پر دفاع کرے گی اور اس پر کسی قسم کی سودے بازی کا سوچا بھی نہیں جا سکتا۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی عام آدمی کو بااختیار بنانے تک اپنی جدوجہد جاری رکھے گی اور چین سے نہیں بیٹھے گی جب تک یہ اعلیٰ مقصد حاصل نہیں ہو جاتا۔جو کہ پارٹی کی بنیاد کے عین مطابق ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں