وزیراعلی سندھ کی جانب سے خط لکھنے کے باوجود وفاقی حکومت نے تاحال کوئی مدد نہیں کی: بیرسٹر مرتضی وہاب


کراچی : سندھ حکومت کے ترجمان اور مشیر قانون ، ماحولیات و ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا ہے کہ کراچی پیکج میں ساڑھے سات سو ارب روپے سندھ حکومت اور ساڑھے تین سو ارب روپے وفاق دے گی ہم بار بار کراچی کا مقدمہ وفاقی حکومت کے سامنے رکھیں گے حالیہ بارشوں میں کراچی سمیت سندھ کے دیگر اضلاع میں بڑی تباہی ہوئی ہے۔
وزیراعلی سندھ کی جانب سے خط لکھنے کے باوجود وفاقی حکومت نے تاحال کوئی مدد نہیں کی یہ بات انہوں نے جمعرات کو شاہ فیصل ٹاون میں اربن فاریسٹ کے افتتاح کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی اس موقع پر ضلع کورنگی کے ڈپٹی کمشنر و ایڈمنسٹریٹر شہریار میمن اور دیگر موجود تھے بیرسٹر مرتضی وہاب نے گٴْل مہر اور نیم کے پودے لگائے اور شہریوں سے بھی پرزور اپیل کی کہ وہ زیادہ سے زیادہ پودے اور درخت لگائیں اور ان کی نگہداشت بھی کریں۔
میڈیا کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا کہ ایک سال پہلے وزیراعلی سندھ نے اس علاقے کادورہ کیا یہ گرین بیلٹ کچرے سے بھرا ہوا تھا ایک شادی ہال بھی بنا ہواتھا کئی ٹن کچرا پڑا ہوا تھا۔ ڈی سی کووزیراعلی نے ہدایات دی اس وقت نفیس لوگ ڈی ایم سی میں اقتدارمیں تھے مگر یہ صاف نہیں ہوا اس لئے ٹاسک ڈپٹی کمشنر کودیا گیا ڈی سی کورنگی نے سول انتظامیہ کے ساتھ مل کرکچراصاف کیا تجاوزات ہٹائے۔
وزیراعلی نے وزیرجنگلات ناصرشاہ کو اربن فاریسٹ پراجیکٹ بنانے کی ہدایت دی تین کلومیٹرکے بیلٹ پرتیرہ ہزارپودے لگائے گئے ہیں جبکہ ایک نرسری بھی بنائی گئی ہیپودوں کی دیکھ بھال کے لئے پانی کامستقل بندوبست کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوشش ہوگی کہ کوئی ٹریٹمنٹ پلانٹ بھی لگائیں کورنگی کے لوگ ماضی کوچھوڑیں ڈی ایم سی نے جوایک ہفتے میں کام کیا ہے وہ اگلے چارسال میں نہیں کرسکے تھے پیپلز پارٹی نے بھی کورنگی کامقدمہ ہمیشہ وزیراعلی کے سامنے رکھا۔
کورنگی کی عوام ان پودوں کی حفاظت کریں گے یہ صدقہ جاریہ بھی ہے انہوں نے کہا کہ قبضہ مافیہ اورچائینہ کٹنگ مافیا سرگرم ہوتو عوام ان کوروکیں۔ شیخ عمر ریحان جیسے ماحول دوست تاجر کورنگی کے لئے درد رکھتے ہیں کورنگی کے اس گرین بیلٹ کے ساتھ اور مقامات پر بھی میڈیا کولیکر جاؤں گا۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ حالیہ بارشوں میں وزیراعظم نے متاثرہ علاقوں کادورہ نہیں کیا وجوہات کاعلم ان کوہوگا بیس اضلاع میں بارش کی وجہ سے تباہی ہوئی ہے وزیراعلی سندھ نے وزیراعظم کوخط لکھ کر تفصیلات بھی مہیا کی اب تک جواب موصول نہیں ہوا ہے۔
صدرمملکت نے بھی دورہ کیا تھا انہوں نے کہا کہ تباہی ہوئی ہے پر مدد نہیں کی گئی۔ نظام میں خرابی نہیں ہوتی ہے افراد میں خرابی ہوتی ہے۔ اچھے لوگ آتے ہیں تو بہتری آتی ہے اختیارات کے ساتھ بلدیاتی نظام ہونا چاہیے ایک اور سوال پر بیرسٹر مرتضی وہاب نے کہا کہ کراچی پیکج میں ساڑھے سات سو ارب سندھ حکومت دے گی ساڑھے تین سو ارب وفاق دے گا آپ کو ترقی اور خو شگوار تبدیلی دکھائی دے گی بار بار کراچی کا مقدمہ وفاقی حکومت کے سامنے رکھوں گا وفاقی حکومت نے جو وعدہ کیا ہے وہ اس کو پورا کریں اسپیکر قومی اسمبلی نے اپنا کردار ادا نہیں کیا۔


اس موقع پر ڈپٹی کمشنر ضلع کورنگی و ایڈمنسٹریٹر شہریار میمن نے کہا کہ ہل نے اس بیلٹ پر اربن فاریسٹ لگا دیا ہے یہاں پر پہلے کچرے کے ڈھیر ہوتے تھے۔اس علاقے عوام اس میں تعاون کریں۔ ہم اکثر پودے لگا دیتے ہیں لیکن پانی اور دیگر چیزوں کی کمی سامنا کرنا پڑتا ہے شاہ فیصل کے اسسٹنٹ کمشنر نے یہاں پانی کا بندو بست کر دیا ہے۔ ہم مستقل بنیادوں پر اس سلسلے کو جاری رکھیں گے مرتضیٰ وہاب نے یہاں پر کچرے کی نشاندہی کی ہے اس پر ان کی ہدایت پر عمل کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں