PPP supports investigation through Judicial Commission: Mian Manzoor Wattoo‏

DSC_0378
DSC_0383
Pakistan People’s Party fully supports the investigation of rigging through Supreme Judicial Commission and both the condition both parties should accept the findings and its consequences. This was stated by President Punjab PPP, Mian Manzoor Ahmed Wattoo while addressing Party leaders and workers in Sialkot today where he went t to distribute relief goods of dialy use among the flood victims.
He further said if manipulation of the mandate was proved by the Judicial Commission then Prime Minister must resign immediately. While responding to another question Mr. Wattoo said that ironically the PML-(N) could not complete its tenures during ninety’s despite two thirds majority both the times adding it was facing the same situation now despite comfortable majority in the House.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that the PPP previous government not only completed the constitutional tenure of five years but also handed over the power to new government in unison of best democratic practices. PPP had only 125 seats in the National Assembly then and had to form the coalition government, he added.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo later distributed the relief goods in Bajwat(Sialkot) among the flood victims assuring them that the PPP would continue the assistance till their rehabilitation with honor and dignity.
Dr. Ashiq Firdous Awan while addressing warned the district administration to desist from extending cash assistance to the flood victims based on the Party affiliations. She called upon the government to extend financial assistance no matter what political Parties they belong to.

پیپلز پارٹی سپریم جوڈیشل کمیشن کے ذریعے مبینہ انتخابی دھاندلی کی تحقیقات کی مکمل حمایت کرتی ہے۔ یہ بات پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے آج سیالکوٹ میں ڈویثرنل اور ضلعی صدور اور پارٹی کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے کہی جہاں وہ اس ضلع کے سیلاب کے متاثرین کے لیے امدادی اشیاء تقسیم کرنے آئے ہیں۔یادرہے کہ انہوں نے کل ضلع جھنگ اور حافظ آباد کے ضلعوں میں پیپلز پارٹی کی طرف سے سیلاب کے متاثرین میں امدادی اشیاء تقسیم کی تھیں۔ میاں منظور احمد وٹو نے مزید کہا کہ سپریم جوڈیشل کمیشن کی رپورٹ دونوں پارٹیوں کو تسلیم کرنی چاہیے اگر دھاندلی ثابت ہو جائے تو پھر وزیراعظم کے استعفیٰ میں ایک دن بھی تاخیر نہیں ہونی چاہیے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ کتنے افسوس کی بات ہے کہ پی ایم ایل (ن) سے حکومت سنبھالی نہیں جا رہی جبکہ انکے پاس دو تہائی اکثریت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ نوے کی دہائی میں بھی انکی دو مرتبہ دو تہائی اکثریت سے حکومت بنی لیکن وہ بھی دو اور ڈھائی سال کے درمیان انکی اپنی غلطیوں کی وجہ سے ختم ہو گئی۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ سابق صدر آصف علی زرداری نے 125 ممبروں کے ساتھ 5 سال پورے کئے اسکے باوجود کہ پیپلز پارٹی کی پچھلی حکومت ایک مخلوط حکومت تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی آئینی مدت پوری کرنے کے بعد ایک جمہوری حکومت سے دوسری جمہوری حکومت کو اقتدار اعلیٰ پارلیمانی روایات کے مطابق منتقل ہوا۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ اگر سیاسی حالات مڈٹرم انتخابات کی طرف جاتے ہیں تو پیپلز پارٹی اسکے لیے بھی پوری طرح تیار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی پنجاب کی قیادت اسکے تنظیمی امور کو آخری شکل دے رہی ہے جو اگلے 2 مہینوں میں مکمل ہوجائیگی اور پیپلز پارٹی ایک فعال اور متحرک جماعت کے طور پر ابھرے گی۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی اولین ترجیح جمہوریت اور صرف جمہوریت ہے جسکے لیے پارٹی کی قیادت اور کارکنوں نے بیشمار قربانیاں دی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی غریب عوام، مزدوروں، کسانوں، طالبعلموں اور ہاریوں کی جماعت ہے اور انکے حقوق کے لیے ہمیشہ جدوجہد کرتی رہے گی۔ بعد میں میاں منظور احمد وٹو نے سید پور اور بجوات کے علاقوں کے سیلاب کے متاثرین کو چےئرمین بلاول بھٹو اور کو چےئرمین آصف علی زرداری کی طرف سے امدادی سامان تقسیم کیا۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی ملک کی واحد سیاسی جماعت ہے جو سیلاب کے متاثرین کے ساتھ کھڑی ہے اور فوٹو سیشن پر یقین نہیں رکھتی۔میاں منظور احمد وٹو نے یقین دلایا کہ پیپلز پارٹی سیلاب کے متاثرین کو تنہا نہیں چھوڑے گی اور انکی مکمل بحالی تک انکی امداد کرتی رہے گی۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ چےئرمین بلاول بھٹو نے ابھی سیلاب کے متاثرین کے لیے 30 امدادی سامان کے ٹرک بھیجے ہیں اور 500مزید ٹرک جو جلد ہی پیپلز پارٹی پنجاب کے حوالے کر دئیے جائیں گے تا کہ سیلاب کے متاثرین کے مصائب کا ازالہ ہو سکے۔ اس سے قبل ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بھی خطاب کیا اور انہوں نے ضلعی انتظامیہ کو خبردار کیا کہ وہ سیاسی بنیادوں پر 25000 روپے کی امدادی رقم سیلاب کے متاثرین کے درمیان تقسیم کرنے سے باز رہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ امدادی رقم سیاسی وابستگیوں سے بالاتر ہو کر سیلاب کے متاثرین میں تقسیم کی جائے۔ میاں منظور احمد وٹو کے ہمراہ تنویر اشرف کائرہ سیکرٹری جنرل، اعجاز سموں، صدر گجرانوالہ ڈویثرن، راجہ عامر، سہیل ملک، علامہ یوسف اعوان، میاں عبدالوحید، چوہدری ریاض احمد گجر اور ڈاکٹر رفاقت تھے۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں