خواجہ آصف نے اسٹیبلشمنٹ کے گماشتہ کا کردار ادا کیا ہے۔ پی پی پی کینیڈا۔

پاکستان پیپلز پارٹی کینیڈا کے صدر چوہدری جاوید گُجر اور جنرل سیکرٹری راؤ محمد طاہر نے اپنے ایک مُشترکہ بیان میں خواجہ آصف کے سابق صدر آصف علی زرداری کے خلاف بیان کی پُر زور مُذمت کرتے ہوۓ کہا کہ اسٹیبلشمنٹ نے سیاسی پارٹیوں میں خواجہ آصف جیسے گُماشتے چھوڑے ہوتے ہیں جن سے نا صرف سیاسی مُخبری کا کام لیا جاتا ہے، بلکہ وقت پڑنے پر سیاسی قیادت کی پیٹھ میں چُھری گھونپنے کا کام لیا جاتا ہے۔

خواجہ آصف نے ۲۰۱۸ کے الیکشن میں آرمی چیف کو رات دو بجے فون کر کے خیرات میں سیٹ حاصل کی اور اسٹیبلشمنٹ نے خواجہ آصف کو اس وقت سیاسی یک جہتی کو پارہ پارہ کرنے کے لیے استعمال کیا جب تمام اپوزیشن پارٹیاں ایک نکتے پر جمع ہو چُکیں ہیں۔

خواجہ آصف یاد رکھیں کہ اس طرح کا کردار ادا کرنے والوں کو تاریخ کبھی مُعاف نہی کرتی ۔ خواجہ آصف یاد رکھیں کہ ان کے والد خواجہ صفدر بھی ایک ڈکٹیٹر کے کا سہ لیس تھے اور خواجہ آصف نے یہ ثابت کیا کہ وہ بھی اپنے والد کی طرح اسٹیبلشمنٹ کے گماشتہ ہیں۔

اپنے بیان سے خواجہ آصف نے صدر زرداری کو نقصان نہی پُہنچایا بلکہ نواز شریف شریف اور مسلم لیگ کی پیٹھ میں چُھرا گھونپا ہے۔ دونوں رہنماؤں مُسلم لیگ کو مشورہ دیا کہ کسی بھی تحریک سے پہلے یا اسٹیبلشمنٹ سے لڑائی سے پہلے اپنی پارٹی سے خواجہ آصف جیسے ایجنٹوں سے پاک کرے .

اپنا تبصرہ بھیجیں