President Zardari highlights Pakistan’s priorities during New York visit


By Fayyaz Chaudhry
NEW YORK, Sept 29 (APP): President Asif Ali Zardari, who led Pakistan’s delegation to 67th General Assembly session of the United Nations, urged the international community to join hands in fighting extremism and terrorism, promoting religious harmony, ensuring peace and security and making the world polio free. President Zardari, while highlighting some of the challenges being faced by Pakistan, informed the world that the country was taking serious steps to fight terrorism and extremism, alleviate poverty and eradicate polio, besides extending cooperation to the countries through developing strong ties based on equality and mutual trust.
The President, who arrived here last Sunday and was scheduled to leave on Saturday, in his address to the UN General Assembly, told the international community that Pakistan had taken a number of steps for ensuring peace and security both at regional and international levels.
He very effectively and successfully conveyed the message to the world that Pakistan had been fighting extremism and terrorism, and extending full support to the international community in this regard.
The President, in his meetings with British Prime Minister David Cameron, Afghan President Hamid Karzai, US Secretary of State Hillary Clinton, Chinese Foreign Minister Yang Jiechi and other leaders emphasized the need for more cooperation and coordination in the efforts to fight extremism and terrorism.
Another important engagement of the President was to attend an important discussion by the donors countries and organizations, where the international community expressed their commitment to eradicate polio from Pakistan, which is among the three countries having polio cases.
Participation of President’s daughter Aseefa Bhutto Zardari in the conference on polio eradication from Pakistan, Nigeria and Afghanistan was another segment of the visit. In her address, she expressed her commitment that she as a Goodwill Ambassador would make her country polio free.
President Zardari also touched upon the sensitive issue of expansion in the Security Council, saying that Pakistan did not want new centers of privileges, no more permanent members to the Council and make it more democratic.
As Pakistan is an important player in the international community, President Asif Ali Zardari explained to the world that in maintaining peace and security in the region, his country had rendered tremendous sacrifices. It has lost over 7,000 soldiers and policemen, and over 37,000 civilians, he added.
The President urged the world community to take practical steps to punish elements involved in disgracing the Holy Prophet Hazrat Muhammad (Peace Be Upon Him) and annoying the Muslims through making a sacrilegious film.
The President said, “We must not become silent observers and should criminalize acts of incitement of hate against the Muslims faith and Prophet Muhammad (Peace Be Upon Him).
President Zardari also mentioned the drone strikes issue in his speech and said that the civilian casualties due to the drone attacks were adding to the complexity of the ballet for winning the hearts and minds of the people.
Another important segment of the visit was a trilateral meeting with the United Kingdom and Afghan leaders.
The three countries leadership reaffirmed their commitment to continue working for the goals of regional peace, stability and development and for the elimination of the scourge of terrorism from the region.
President Zardari, while highlighting the importance of durable peace and stability in Afghanistan, underscored the need for an Afghan-led and Afghan-owned peace process in that country.
Text of President Zardari’s speech at UN General Assembly
Bismilla hirrahmaan irrahim —
Assalam-o-Alaikum — Peace be upon you.

Before I take up my speech, I want to express the strongest condemnation for the acts of incitement of hate against the faith of billions of Muslims of the world and our beloved prophet, Mohammad (peace be upon him).
The International community must not become silent observers and should criminalize such acts that destroy the peace of the world and endanger world security by misusing freedom of expression.
Pakistan moves the United Nations to immediately address in earnest this alarming concern and the widening rift to enable the comity of nations to be one again.
Mr. President, 
I want to congratulate you on your election to this important post.
I want to convey our appreciation of the previous President, His Excellency Nassir Abdul Aziz Al Nasser, from our brotherly state of Qatar, who skillfully preceded you.
I would like to further express our appreciation for the laudable work of the honorable Secretary General Ban Ki Moon. We greatly appreciate his leadership in guiding the work of this organization.
It is a special privilege to be with you today, representing the brave and courageous people of Pakistan.
Globally, we face enormous challenges.
But with collective efforts and commitment we can provide a better future to our people.
We must work to end poverty.
We must work to protect the planet, and mitigate climate change.
We must ensure equal rights to all peoples, and protect the weak & vulnerable.
We must pursue justice and fairness for all people.
We must pursue the peaceful settlement of international disputes.
We must save our current and future generations from the horrors of war.
I think of my own three children and the generations of children yet unborn.
They, and all the children of the world, deserve safety, stability, and security.
These goals have guided me throughout my four years in office as President of Pakistan.
These are the goals and principles about which I want to talk to you today.
Mr. President, 
Pakistan’s engagement with the United Nations lies at the heart of these goals.
We are proud of going above and beyond the call of duty in fulfilling our international responsibilities.
Pakistan has consistently been among the top UN peacekeeping troop contributors for many years.
Today, over 10,000 Pakistani troops proudly wear the UN Blue Helmets in the service of our brothers and sisters around the world.
Mr. President, 
Our election to the Security Council reflects our commitment to world peace.
It is also a vote of confidence by the international community for Pakistan and Ambassador Haroon.
The UN represents our common aspirations for peace and development.
However, it needs reform.
The UN system must become more democratic and more accountable.
Reform should be based on consensus and democratic principles.
Mr. President,
In the last several years, Pakistan has repeatedly suffered from natural calamities.
The people of Pakistan appreciate the support of the United Nations and the international community.
Mr. President, 
Being a democratic country, we believe that legitimate aspirations of any people should be accommodated peacefully. and in a manner consistent with sovereignty, unity and territorial integrity.
We support the rights of the Palestinian people and an independent Palestinian State.
We also favor the admission of Palestine as a full member of the United Nations.
Mr. President, 
There are a lot of questions that are asked of Pakistan these days.
I am not here to answer questions about Pakistan.
The people of Pakistan have already answered them.
The politicians of Pakistan have answered them.
The soldiers of Pakistan have answered them.
We have lost over seven thousand Pakistani soldiers and policemen, and over 37,000 civilians.
We have lost our Minister for Minority Affairs, Shahbaz Bhatti and my friend Salmaan Taseer, the Governor of our most populous province of Punjab, to the mindset of extremism.
And I need not remind my friends here today, that I bear a personal scar.
On December 27, 2007 knowing her life was under threat from the mindset she had warned the world against, Pakistan’s first elected woman leader and my wife Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto was martyred through the bullets and bombs of terrorists.
Terrorism and extremism have destroyed human lives, torn social fabric, and devastated the economy.
Our economy, our lives, our ability to live in the shadow of our Sufi saints and our freedom-loving forefathers have been challenged.
We have responded.
Our soldiers have responded.
So I am not here to answer questions about Pakistan.
I am here to ask some questions on behalf of my people.
On behalf the two year old baby who was killed in the bombing at Lahore’s Moon Market on December 7, 2009.
On behalf of Pervaiz Masih, a Christian Pakistani, who was killed with six others, trying to protect Muslim Pakistanis during a bomb attack on the Islamic University in Islamabad on October 20, 2009.
On behalf of Mr. GHA-YOOR, the Commandant of the Frontier Constabulary police force in Peshawar, who was assassinated by militants on August 4, 2010.
On behalf of the traders and entrepreneurs in Peshawar, Quetta, Lahore and Karachi, of the dozens of marketplaces that have been ravaged by multiple bombings. Over and over and over again.
And perhaps most of all, on behalf of my three children, whose mother Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto was also martyred by terrorists.
Mr. President, 
For more than thirty years, our doors have been open to my Afghan brothers and sisters.
For many years, we were left to fend for ourselves and our Afghan guests.
Mr. President, 
I remember the red carpet that was rolled out for all the dictators in our country – dictators who promised the international community the moon – while Pakistan was kept in the dark.
These dictators and their regimes are responsible for suffocating and throttling Pakistan, Pakistan’s institutions, and Pakistani democracy.
I remember the judicial execution of Pakistan’s first elected leader, Shaheed Zulfiqar Ali Bhutto.
I remember the jailing of Pakistan’s elected leaders.
I remember the twelve years I, myself spent in prison.
And I remember the billions provided by the international community to support those dictatorships.
My country, its social fabric, its very character has been altered.
Our condition today is a product of dictatorships.
Mr. President,
No country and no people have suffered more in the epic struggle against terrorism, than Pakistan.
Drone strikes and civilian casualties on our territory add to the complexity of our battle for hearts and minds through this epic struggle.
To those who say we have not done enough, I say in all humility:
Please do not insult the memory of our dead, and the pain of our living.
Do not ask of my people, what no one has ever asked of any other peoples.
Do not demonize the innocent women, and children of Pakistan.
And please, stop this refrain to do more.
The simplest question of all is:
How much more suffering can Pakistan endure?
Mr. President, 
I am sure the international community does not want any suffering anywhere, least of all in Pakistan.
We believe in fact, that the international community is a partner.
This is because it is the common interest of all nations to work together.
In Pakistan democracy has helped bring about a major strategic shift in how we view working together.
Within Pakistan, our democracy has brought about major changes.
InshaAllah, this will be the first civilian government in Pakistan’s sixty-six year history to complete its full, five year term.
In this time, Parliament has passed unprecedented reforms.
We have restored the consensus 1973 Constitution.
The National Assembly has enacted wide ranging social reforms.
We have established a National Commission on Women and a National Commission on Human Rights.
We have established for the very first time a truly Independent Election Commission, to ensure free, fair and transparent elections.
Our media is free, uncensored and thriving.
Our civil society is flourishing under the protection of democracy.
We have created the first social safety net through the women of Pakistan for the weak and less privileged. Millions of families have benefitted.
We have aided the poor and at the same time empowered the women of our households.
This safety net is called the Benazir Income Support Program.
These are the gifts of democracy.
This is the dream of Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto.
Mr. President, 
The growing regional pivot in Pakistan’s foreign policy is a reflection of our democratic policy-making.
In engaging with our region, we are changing the future.
In China our strategic partnership is growing from strength to strength.
In Afghanistan, we have begun to engage and deepen our friendship with the entire range of the Afghan political spectrum.
We believe that a sovereign, stable and secure Afghanistan is good for the Afghan people.
And what is good for the Afghan people is good for Pakistan.
While our hearts and homes remain open to our Afghan brothers, it is imperative that the international community support the three million Afghan refugees in Pakistan in their quest to return home with dignity.
A brighter Afghan future will only be possible when the search for peace is Afghan-owned, Afghan-driven and Afghan-led.
We respect and support the efforts of the Government of Afghanistan for reconciliation and peace.
Pakistan will support in every way possible, any process that reflects Afghan national consensus.
Similarly, we approach our relations with India on mutual trust.
The contacts between our leadership are expanding.
I was encouraged by my discussions with the Prime Minister of India last month in Tehran, who I met for the fifth time in four years.
Mr. President, 
Our principled position on territorial disputes remains a bedrock of our foreign policy.
We will continue to support the right of the people of Jammu & Kashmir to peacefully choose their destiny in accordance with the UN Security Council’s long-standing resolutions on this matter.
Kashmir remains a symbol of the failures, rather than strengths of the UN system.
We feel that resolution of these issues can only be arrived in an environment of cooperation.
By normalizing trade relations we want to create a regional South Asian narrative.
This narrative will provide an environment that will mutually benefit the countries of our region.
Mr. President, 
Along this road, there are pitfalls.
One of them is the tendency to respond to failure through blame.
Pakistan does not blame others for the challenges it faces.
We believe we should look for win-win solutions.
Regional cooperation and connectivity will bring us closer and bind us together.
It will make us stakeholders in each other’s futures.
Our hosting of a quadrilateral summit next month and our signing of the Afghan Pakistan Transit Trade Agreement are proof of this commitment to regional connectivity.
The lesson we learnt in Pakistan from the last thirty years is that history cannot be changed.
But the future can-a future that is brighter, more prosperous and more secure,
not only for Pakistanis, but for all people of the region, and indeed the world.
I must thank the member states of the European Union for recognizing the value of trade to Pakistan.
We seek trade, rather than aid.
By granting trade concession to Pakistan, the EU has sent a positive message.
The trade concessions will help us revive the economy and fight terrorism.
Mr. President, 
As we embark on this ambitious transformative experience, we are aware that there are threats and pitfalls.
One of them is the spread and illegal trade of heroin.
Despite the presence of international forces in Afghanistan, the size of the heroin trade has increased by 3000% in the last decade.
The heroin industry is eroding the social fabric of our societies.
Terrorist activities within our region and indeed all over the world are funded and fueled by the unrestricted production and sale of illegal drugs.
Pakistan has pursued an ambitious agenda to control this menace.
We are coordinating with our neighbors and will hold a conference later this year to develop a unified approach to stamping out this drug trade.
I call upon this august body, and especially those nations represented here who are actively engaged in the region.
In this great hall of international collective action, let us begin this process –
here, today, together.
Mr. President, Excellencies, delegates, fellow citizens of the world:
I have committed my Presidency and my nation’s future to a paradigm shift.
A permanent democratic future for Pakistan.
It has not been easy.
But nothing worth fighting for is easy.
We long ago stopped thinking of doing what is easy.
Instead, we have committed ourselves to doing what is right.
In that regard, I recall the powerful words of my beloved martyred wife and my leader Shaheed Mohtarma Benazir Bhutto when she appeared before this august body sixteen years ago.
Her words ring out and can guide us into a new future.
She said in 1996:
“I dream of a third millennium in which the gap between rich and poor evaporates; in which illiteracy, hunger, malnutrition and disease are at long last conquered;
I dream of a third millennium in which every child is planned, wanted, nurtured and supported; and in which the birth of a girl is welcomed with the same joy as that of a boy.
I dream of a millennium of tolerance and pluralism, in which people respect other people, nations respect other nations, and religions respect other religions. That is the third millennium I see for my country and all of yours.”
We have made some progress towards achieving these goals.
But so much remains to be done.
In her memory and in the name of God Almighty, Pakistan commits to that path again today.
Thank you ladies and gentlemen, and may peace be upon you, and your countries, and the people of your countries.
Pakistan Zindabad. 
صدرمملکت اسلامی جمہوریہ پاکستان عزت مآب آصف علی زرداری کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 67ویں اجلاس سے خطاب
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
جناب صدر،
السلام علیکم ۔۔آپ پرسلامتی ہو
ا پنا خطاب شروع کرنے سے پہلے ، میں دنیا کے اربوں مسلمانوں کے مذہب اسلام اور ہمارے محبوب پیغمبر حضرت محمدۖ کے خلاف نفرت ابھارنے کے اقدامات کی شدید الفاظ میں مذمت کا اظہا رکرنا چاہتا ہوں۔
عالمی برادری کو خاموش تماشائی نہیں بننا چاہئے بلکہ دنیا کے امن کو تباہ اور اظہار رائے کی آزادی کے غلط استعمال پر عالمی سلامتی کو خطرے میں ڈالنے والے ایسے اقدامات کو جرم قرار دینا چاہئے۔
پاکستان اقوام متحدہ سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ فوری طور پر اس شدید تشویش اور بڑھتے ہوئے خلیج کا ازالہ کرکے تمام ممالک کو ایک باپھرمتحد ہونے کے قابل بنائے ۔
جناب صدر،
میں اس اہم عہدے کے لئے آپ کے انتخاب پرآپ کو مبارک باد دینا چاہتاہوں ۔
میں برادرانہ ملک قطرسے تعلق رکھنے والے سابق صدرناصرعبدالعزیزالنصر اورعزت مآب سیکرٹری جنرل بان کی مون کی رہنمائی میں اس تنظیم کے لئے ان کی خدمات کوبھی خراج تحسین پیش کرنا چاہتا ہوں۔
آج آپ کے مابین میری موجودگی میرے لئے خصوصی اعزازکی بات ہے کہ میں پاکستان کے بہادرعوام کی نمائندگی کررہا ہوں ۔
 
عالمی سطح پر ہمیں بڑے چیلنجز کا سامنا ہے
لیکن اجتماعی کوششوں اور عزم کے ساتھ ہم اپنے عوام کو اچھا مستقبل فراہم کرسکتے ہیں۔
ہمیں غربت کے خاتمہ ،کرہ ارض کے تحفظ اور موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کیلئے کام کرنا چاہئے۔
ہمیں تمام لوگوں کو مساوی حقوق کی فراہمی اور کمزور افراد کے تحفظ کو یقینی بنانا چاہئے۔
ہمیں تمام لوگوں کیلئے انصاف اور حق کی بات اور عالمی تنازعات کے پرامن تصفیہ کیلئے کوششیں کرنی چاہئے۔
ہمیں اپنے موجودہ اور مستقبل کی نسل کو جنگ کی ہولناکیوں سے محفوظ بنانا چاہئے۔
میرے خیال میں میرے  اپنے تین بچے، ابھی آنیوالی نسل اور پوری دنیا کے بچے تحفظ ، استحکام اور سیکورٹی کے حقدار ہیں۔
پاکستان کے صدر کے عہدے پر تمام چار برسوں کے دوران ان مقاصد نے میری رہنمائی کی۔
یہ ہی وہ مقاصد اور اصول ہیں جن پر آج میں بات کرنا چاہتا ہوں۔
جناب صدر۔
اقوام متحدہ کے ساتھ پاکستان کے تعلقات ان مقاصد کا بنیادی نقطہ ہے۔ ہمیں اپنی عالمی ذمہ داریوں کی تکمیل کی ڈیوٹی کی انجام دہی پر فخر ہے۔
پاکستان کافی عرصہ سے مسلسل اقوام متحدہ کی امن فوج میں ایک بڑے شراکت دار کے طور پر حصہ لے رہا ہے۔
اس وقت دنیا میں ہمارے بھائیوں اور بہنوں کی خدمت کیلئے 10 ہزار سے زائد پاکستانی فوجی انتہائی فخر کے ساتھ اقوام متحدہ کی نیلی ٹوپی پہنے ہوئے ہیں۔
سلامتی کونسل کیلئے بھی ہمارا انتخاب عالمی امن کیلئے ہمارے عزم کا عکاس ہے۔
یہ بھی عالمی برادری کی جانب سے پاکستان اور سفیر ہارون پر اعتماد کا اظہار ہے۔
اقوام متحدہ امن اور ترقی کیلئے ہماری مشترکہ خواہشات کی نمائندگی کرتی ہے تاہم اس میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔
اقوام متحدہ کا نظام زیادہ جمہوری اور جوابدہ ہونے کے ساتھ ساتھ اتفاق رائے اور جمہوری اصولوں پر مبنی ہونا چاہئے۔
گزشتہ کئی سالوں سے پاکستان قدرتی آفات سے بار بار متاثر ہوا ہے اور پاکستانی عوام مشکلات کی ان گھڑیوں میں اقوام متحدہ اور عالمی برادری کے تعاون کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے۔
ایک جمہوری ملک ہونے کے ناطے ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ کسی بھی شخص کی جائز خواہشات کو پرامن انداز میں جگہ دی جائے جو ان کی خودمختاری ، اتحاد اور علاقائی سالمیت سے متصادم نہ ہو۔
ہم فلسطینی عوام اور ایک آزاد فلسطینی ریاست کے حق اور اقوام متحدہ میں فلسطین کو ایک مکمل رکن کی حیثیت سے شامل کرنے کی حمایت کرتے ہیں۔
بہت سے سوالات ہیں جو آج پاکستان  سے کیے جارہے ہیں۔
میں یہاں پر پاکستان سے متعلق سوالات کے جوابات دینے کیلئے  نہیں آیا۔ پاکستانی عوام سیاستدانوں اور فوج نے پہلے ہی ان کے جوابات دے دیئے ہیں۔
ہم نے سات ہزار سے زائد پاکستانی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں اور 37 ہزار سے زائد شہریوں کی قربانی دی ہے۔ ہم نے وفاقی وزیر اقلیتی امور شہباز بھٹی اور میرے دوست گورنر پنجاب سلمان تاثیر کو کھویا۔ انہوں نے کہا کہ 27 دسمبر 2007ء کو یہ جاتے ہوئے بھی کہ انتہاء پسندوں کی جانب سے ان کی زندگی کو خطرہ ہے پاکستان کی پہلی منتخب خاتون لیڈر اور میری اہلیہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو کو دہشت گردوں کی گولیوں اور بموں سے شہید کیا گیا۔
 
دہشت گردی اور انتہا پسندی نے انسانی زندگیوں کو تباہ کیا۔ ہمارے معاشرتی ڈھانچے اور معیشت کو تباہ و برباد کر دیا ۔
ہماری معیشت، ہماری زندگیاں اور صوفی بزرگوں کی تعلیمات کے سائے میں زندگی گزارنے کی اہلیت اور آزادی سے محبت کرنے والے آباوء اجداد کو چیلنج کر دیا گیاہے جس کا ہم نے جواب دیا ہے۔
ہمارے فوجیوں نے جوای کارروائی کی۔
میں یہاں پر آپ کے سوالوں کا جواب دینے کیلئے نہیں آیا ہوں بلکہ میں پاکستانی عوام کی طرف سے آپ سے کچھ سوالات کرنا چاہتا ہوں۔ میں اس دوسالہ بچے کی طرف سے بات کرتا ہوں جو کہ 7 دسمبر 2009ء کو لاہور کی مون مارکیٹ میں بم دھماکہ سے جاں بحق ہوگیا تھا۔
6 دیگر افراد کے ساتھ ہلاک ہونے والے پرویز مسیح کی طرف سے سوال پوچھتا ہوں جو کہ اسلام آباد میں 20 اکتوبر 2009ء کو اسلامی یونیورسٹی میں بم حملہ میں ہلاک ہوگیا تھا۔
میں پشاور میں فرنٹیئر کانسٹیبلری کے کمانڈنٹ غیور کی طرف سے سوال کرتا ہوں جس کو 4 اگست 2010ء کو عسکریت پسندوں نے قتل کر دیا تھا۔
میں پشاور ، کوئٹہ، لاہور اور کراچی میں کئی بم دھماکوں سے تباہ ہونے والی مارکیٹوں کے تاجروں اور کاروباری حضرات کی طرف سے سوال کرتا ہوں اور شاید سب سے بڑھ کر میں اپنے ان 3 بچوں کی طرف سے سوال کرتا ہوں جن کی والدہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو کو بھی دہشت گردوں نے قتل کر دیا تھا۔
جناب صدر۔۔۔
گزشتہ 30 سالوں سے ہمارے دروازے افغان بہن بھائیوں کیلئے کھلے رہے ہیں اور میں اپنے ملک میں ان تمام آمروں کے استقبال کو بھی یاد کرتا ہوں جنہوں نے عالمی برادری سے ملک کو چاند کی طرح روشن بنانے کا وعدہ کرکے تاریکیوں میں ڈال دیا۔
یہ آمروں اور ان کے ادوار پاکستان کا گلہ گھونٹے اور پاکستانی اداروں اور پاکستانی جمہوریت کا گلا دبانے کے ذمہ دار ہیں۔
میں پاکستان کے پہلے منتخب رہنما شہید ذوالفقار علی بھٹو کے عدالتی قتل کو بھی یاد کرتا ہوں۔
میں پاکستان کے منتخب رہنمائوں کو جیلوں میں قید کرنے کو بھی یاد کرتا ہوں۔
میں جیل گزارے گئے اپنے بارہ سال بھی یاد کرتا ہوں اور میں ان آمریتوں کو عالمی برادری کی طرف سے اربوں ڈالرز کی دی جانے والی امداد کا بھی ذکرکرتا ہوں۔
میرے ملک کا سماجی ڈھانچہ اور اس کا کردار بالکل تبدیل کر دیا گیا۔ ہماری موجودہ حالت آمریت کی پیداوار ہے ۔
جناب صدر۔۔
دنیا بھر کے کسی بھی ملک نے دہشت گردی کے خلاف جدوجہد میں پاکستان سے زیادہ نقصان نہیں اٹھایا۔ ہماری ہی حدود میں ڈرون حملوں اور شہریوں کی ہلاکتوں اور جانی نقصانات سے اس جدوجہد میں ہمارے دلوں اور دماغوں میں اس جنگ کے حوالہ سے پیچیدگیوں میں اضافہ ہوا۔
وہ لوگ جو یہ کہتے ہیں کہ ہم نے دہشت گردی کے خلاف کوئی زیادہ جنگ نہیں کی میں ان سے بڑی عاجزی سے کہتا ہوں کہ اس جنگ کے شہداء اور ہماری زندگی کو پیش آنے والی تکالیف کی توہین نہ کریں۔ میرے عوام سے نہ پوچھیں اور پاکستانی معصوم خواتین اور بچوں کو آسیب زدہ نہ کیا جائے اور سب سے آسان ترین سوال یہ ہے کہ پاکستان ایسی مزید مشکلات کس طرح مزید برداشت کرسکتا ہے۔
مجھے یقین ہے کہ عالمی برادری پاکستان اور دنیا بھر میں کہیں بھی اس قسم کی مشکلات اور تکالیف نہیں چاہتی ۔
جناب صدر۔۔
درحقیقت اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ عالمی برادری بھی ہماری شراکت دار ہے اور ایسا مشترکہ مفاد کیلئے تمام قوموں کے اکٹھے مل کر کام کرنے کی وجہ سے ہے۔
پاکستان میں جمہوریت سے اکٹھے کام کرنے کے تناظر میں بڑی سٹریٹجک تبدیلی لانے میں مدد ملی ہے۔
پاکستان کے اندر ہماری جمہوریت بھی بڑی تبدیلیاں لائی ہے۔
پاکستان کی ساٹھ سالہ تاریخ میں انشاء اللہ تعالیٰ یہ پہلی سویلین حکومت ہوگی جو کہ اپنی 5 سالہ مدت مکمل کرے گی۔
اس دوران پارلیمنٹ نے بے مثال اصلاحات منظور کیں۔
ہم نے 1973ء کے متفقہ آئین کو بحال کیا ہے۔
قومی اسمبلی نے بڑے پیمانے پر سماجی اصلاحات بارے قوانین بنائے۔
ہم نے خواتین کے لیے اور انسانی حقوق بارے قومی کمیشن بنائے۔
ہم نے پہلی مرتبہ ملک میں حقیقی آزاد الیکشن کمیشن بنایا تاکہ ملک میں آزادانہ منصفانہ اور شفاف انتخابات کے انعقاد کو یقینی بنایا جاسکے۔
ہمارا میڈیا آزاد ، غیر سنسر شدہ اور تیزی سے پھیل رہا ہے۔
ہماری سول سوسائٹی جمہوریت کے تحفظ میں فروغ پذیر ہے۔
ہم نے ملک کی کم مرعات یافتہ ، کمزور اور افلاس زدہ عوام کے لئے خواتین کے ذریعے پہلا سماجی تحفظ کا نظام بنایا جس سے لاکھوں خاندانوں کو فائدہ پہنچا ہے۔
ہم نے غریبوں کی مدد کی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ گھریلو خواتین کو بھی با اختیار بنایا اور سماجی تحفظ کے اس نظام (نیٹ) کا نام بینظیر انکم سپورٹ پروگرام ہے۔
یہ  جمہوریت کے تحفے ہیں
 
اور یہ شہید محترمہ بینظیر بھٹو کا خواب ہے۔
جناب صدر۔۔
پاکستان کی خارجہ پالیسی میں علاقائی اہمیت ہماری جمہوری پالیسی سازی کا عکاس ہے۔
ہم اپنے خطہ میں امن مذاکرات کرکے مستقبل میں تبدیلی لارہے ہیں۔
چین میں ہماری سٹریٹجیک شراکت داری مضبوط سے مضبوط ہور رہی ہے۔
افغانستان میں ہم نے مذاکراتی عمل شروع کیا ہے اور افغان سیاسی رہنمائوں سے گہری دوستی کی ہے۔
ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ خود مختار، مستحکم اور محفوظ افغانستان افغان عوام کے لیے اچھا ہے۔
اور جو کچھ افغان عوام کیلئے اچھا ہے وہ پاکستان کیلئے بھی اچھا ہے۔
ہمارے دل اور گھر افغان بھائیوں کیلئے کھلے ہیں۔ پاکستان میں موجود 30 لاکھ افغان مہاجرین کیلئے عالمی امداد بھی ناگزیر ہے جو کہ پاکستان سے باوقار طریقہ سے اپنے وطن واپسن جانے کے خواہاں ہیں۔
جناب صدر۔۔
کشمیر اقوام متحدہ کے مضبوط ترین نظام کے باوجود ابھی تک ناکامیوں کی علامت ہے ہم محسوس کرتے ہیں کہ اس قسم کے مسائل کے حل تک تعاون کے ماحول میں ہی پہنچا جاسکتا ہے۔
ہم تجارتی تعلقات کو معمول پر لاکر جنوبی ایشیائی خطہ کو باہم ملانا چاہتے ہیں۔
اکٹھے ہونے سے ایسا ماحول پیدا ہوگا جس سے خطہ کے ممالک کو باہمی طور پر فائدہ پہنچے گا۔
اس راستہ میں بڑے نشیب و فراز ہیں جن میں سے ایک ناکامی کی صورت میں الزام تراشی کا رجحان ہے۔
پاکستان درپیش مشکلات اور چیلنجز کا کسی پر الزام نہیں لگاتا۔ ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ مسائل کو کامیابی سے حل تلاش کیا جائے۔
علاقائی تعاون اور رابطہ سے ہم ایک دوسرے کے قریب اور اکٹھے ہوجائیں گے۔ اس سے ہم مستقبال میں ایک دوسرے کے شراکت دار ہو جائیں گے۔
آئندہ مہینے ہماری طرف سے چار فریقی اعلیٰ سطحی اجلاس کا انعقاد اور افغان پاکستان عبوری تجارت بارے معاہدہ خطہ کو آپس میں ملانے کے ہمارے عزم کا ثبوت ہے۔
جناب صدر۔۔۔
ہم نے گزشتہ 30 سالوں سے پاکستان میں یہ سبق سیکھا ہے کہ تاریخ کو کبھی بھی تبدیل نہیں کیا جاسکتا۔ تاہم مستقبل کو تبدیل کیا جاسکتا ہے۔اور ایسا مستقبل جو کہ نہ صرف پاکستانیوں کے لیے بلکہ خطہ کے تمام لوگوں اور درحقیقت دنیا بھر کے لوگوں کیلئے زیادہ تابناک ، زیادہ خوشحال اور زیادہ محفوظ ہو۔
مجھے پاکستان کے ساتھ تجارت کی قدر وقیمت تسلیم کرنے پر یورپی یونین کے رکن ممالک کا بھی شکریہ ادا کرنا چاہئے۔ ہم امداد کی بجائے تجارت چاہتے ہیں۔
پاکستان کو تجارتی مراعات دے کر یورپی یونین نے مثبت پیغام دیا ہے۔ تجارتی مراعات سے ہمیں معیشت کی بحالی کے ساتھ ساتھ دہشتگردی کے خلاف لڑائی میں بھی مدد ملے گی۔
ہم اس مقصد کے لئے عبوری تجربہ کر رہے ہیں اس لیے ہم اس ضمن میں پیش آنے والے خطرات اور نشیب و فراز سے بھی آگاہ ہیں جن میں سے ایک ہیروئن کی غیر قانونی تجارت اور ہیروئن کا پھیلائو بھی ہے۔
افغانستان میں بین الاقوامی فورسز کی موجودگی کے باوجود گزشتہ دس سالوں میں ہیروئن کی تجارت کے حجم میں 3 ہزار فیصد اضافہ ہوا اور ہیروئن کی صنعت ہمارے معاشروں کے سماجی ڈھانچے کو تباہ کر رہی ہے۔ ہمارے خطہ اور دنیا بھر میں دہشت گردانہ کارروائیوں کیلئے رقومات ، منشیات کی غیر قانونی پیداوار اورفروخت سے فراہم کی جاتی ہیں۔
پاکستان نے اس لعنت پر قابو پانے کیلئے بامقصد ایجنڈا پر عمل کیا ہے۔
ہم اپنے ہمسایوں کے ساتھ رابطہ کر رہے ہیں اور اس سال کے آخر میں کانفرنس منعقد کرائیں گے تاکہ منشیات کی اس تجارت کو ختم کرنے کیلئے مشترکہ متفقہ لائحہ عمل بنایا جاسکے۔
میں اس باوقار ادارہ اور خطہ میں سرگرمی سے مصروف عمل اور خاص طور پر یہاں پر نمائندگی کرنے والی اقوام کو یاد دلاتا ہوں کہ آئیں آج سے ہم یہاں اجتماعی کوششوں کا یہ عمل شروع کریں۔
میں نے اپنی صدارت کے دوران اپنی قوم کے مستقبل کو بلندیوں تک لیجانے کا پختہ عزم کر رکھ اہے اور پاکستان کا مستقل طور پر جمہوری مستقبل ہو یہ آسان کام نہیں رہا ہے تاہم اس کیلئے جدوجہد جیسی قابل قدر کوئی چیز نہیں اور ہم نے آسان کاموں بارے سوچنا بہت پہلے چھوڑ دیا تھا۔
ہم نے خود ہی درست کام کرنے کا عزم کر رکھا ہے۔
اس ضمن میں میں اپنی پیاری شہید اہلیہ اور میری رہنما شہید محترمہ بینظیر بھٹو کے وہ طاقتور ترین الفاظ یاد کرتا ہوں  جب انہوں نے 16 سال قبل اس باوقار اور قابل تعظیم ادارہ میں کہا تھا۔ انہوں نے 1996ء میں کہا تھا”کہ میں خواب دیکھتی ہوں کہ تیسرے ہزایہ میں غریب اور امیر میں خلا ختم ہو جائے گا جس میں ناخواندگی، بھوک، غذا کی کمی اور بیماریوں پر بالآخر قابو پالیا جائے گا میں تیسرے ہزایہ کا خواب دیکھتی ہوں جس میں بچے کی خواہش کی جائے اسے پالا پوسا جائے اور جس میں لڑکی کی پیدائش پر بھی لڑکے کی پیدائش کی طرح خوشی منائی جائے میں ایسے ہزاریئے کا خواب دیکھتی ہوں جس میں برداشت اور انفرادیت برقرار رکھنے کا حق ہو اور جس میں عوام دوسرے عوام کا احترام ، اقوام دوسری اقوام اور مذہب دوسرے مذاہب کا احترام کریں اور وہ تیسرا ہزاریہ میں اپنے ملک اور آپ سب کیلئے دیکھتی ہوں”۔
ہم نے ان اغراض و مقاصد اور اہداف کے حصول میں کچھ ترقی کی ہے تاہم ابھی بہت کچھ کرنا باقی ہے۔ ان کی یاد اور اللہ تعالیٰ کے نام پر پاکستان اس راستہ پر چلنے کا دوبارہ عزم کرتا ہے۔ خواتین وحضرا ت آپ سب کا شکریہ۔ آپ سب پر آپ کے ممالک اور آپ کے ممالک کے عوام پر اللہ تعالیٰ کی رحمتیں ہوں۔
ــــپاکستان زندہ بادــــ
 

اپنا تبصرہ بھیجیں