PPP is ready to contest the local bodies elections any time, says Mian Manzoor Wattoo

Mian Manzoor Ahmned Wattoo while addressing the press conference here today said that the PPP was in competition with the PTI and PML (N) because both parties were the rightist parties representing the upper middle class. PPP will contest elections against both the parties.
He added that the PPP pro-dominantly represented the lower middle class with liberal and progressive orientations that harmonized with the political philosophy of the founding leaders of PPP.
He said that the PPP was supporting democracy to attain political stability in the country that should not be treated as support to the present government. He further said that no country could develop on sustainable basis without it. Political stability and economic development are intimately linked, he added.
He said that the former President’s two weeks tour of the Punjab had infused new energy in the Party rank and file as a result of extensive interaction with the leaders and workers hailing from the seven divisions of the central Punjab.
He said that Co-Chairman Asif Ali Zardari had conveyed his deep appreciations to the PPP Punjab leaders and others who made his tour a big success. He asked Mian Manzoor Ahmed Wattoo to convey his appreciations to them that he did today in a meeting of all concerned.
He pointed out that the Punjab PPP was excited to know that the Co-Chairman was so keen to evolve a system based on information technology through which he would like to interact directly with office bearers of all tiers even at the Union Council level.
He further said that the Chairman Bilawal Bhutto and Co-Chairman Asif Ali Zardari would come to Punjab soon because the task of the organization of the party was the focus of their attention. He added that his focus was also on the organizational aspects of the PPP Punjab and he intended to complete it within next two months. He claimed once the organization of the Party was complete at all tiers then no political force can defeat PPP.
He said that the PPP Punjab was confident to send about twenty five thousand people to Karachi who would participate in the rally on October 18th that would be addressed by Chairman Bilawal Bhutto Zardari.
While responding to a question, Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that he did not see the holding of local bodies elections in the province of Punajb because the Punjab government did not want to empower the people at local level through devolution.
He however observed that the PPP was ready to contest the local bodies elections any time and would surprise many because the Party was in a position to win local bodies elections. The PP suffered the political setback in the May 2013 elections because the mandate was stolen through RO’s, he argued.
Tanvir Ashraf Kaira Secretaty General PPP Punjab, Deewan Mohayuddin, Allama Yousuf Awan, Sohail Malik Senior Vice President, Manzoor Manika, Mian Waheed, Afnan Butt, Abid Saddiqui and other were also present in the Press Conference.

میاں منظور احمد وٹو صدر پیپلز پارٹی پنجاب نے آج یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی، پی ٹی آئی اور مسلم لیگ (ن) کی سیاسی حریف ہے کیونکہ یہ دونوں دائیں بازو کی پارٹیاں ہیں اور پیپلز پارٹی آئندہ انکے خلاف انتخابات لڑے گی۔انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی زیادہ تر نچلے متوسط طبقے کی نمائندگی کرتی ہے اور یہ پارٹی لبرل اور ترقی پسند جماعت ہے جو اسکے بانی قائدین کی سیاسی سوچ کے مطابقت رکھتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی ملک میں سیاسی استحکام کی خاطر جمہوریت کی حمایت کر رہی ہے لیکن اس کو ہر گز موجودہ حکومت کی حمایت نہ سمجھا جائے۔انہوں نے کہا کہ سابق صدر آصف علی زرداری کے پنجاب کے دو ہفتے کے دورے کے دوران انہوں نے 7 ڈویثرنز سے پارٹی کے عہدیداروں اور کارکنوں سے ملاقاتیں کیں۔ انہوں نے کہا کہ کوچےئرمین آصف علی زرداری نے آج کراچی رونگی سے قبل انہیں بتایا کہ وہ اپنے دورے سے بہت خوش ہیں اور انکے جذبات انکو پہنچائیں جنہوں نے کامیاب دورہ بنانے کے لیے شب و روز محنت کی۔ میاں منظور احمد وٹو نے آج تمام لوگوں کو صدر کے جذبات انکو پہنچا دئیے۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پنجاب کے پیپلز پارٹی کے عہدیداران اور کارکن کوچےئرمین کی پارٹی کے تنظیمی امور میں گہری دلچسپی سے بڑے متاثر ہیں۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ کوچےئرمین ایک ایسا نظام وضع کر رہے ہیں جسکے ذریعے وہ براہ راست ہر عہدیدار سے رابطہ قائم کر سکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ چےئرمین بلاول بھٹو اور کوچےئرمین آصف علی زرداری جلد پنجاب آئیں گے اور پارٹی کے تنظیمی امور کو فعال بنائیں گے جو کہ انکی توجہ کا مرکز ہے۔ انہوں نے کہا کہ پارٹی کی تنظیم کو آئندہ دو مہینوں میں مکمل کرنا بھی انکی توجہ کا فوکس ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب سے تقریباً 25 ہزار کارکن کراچی کے 18 اکتوبرکے جلسے میں شرکت کریں گے ،جس سے چےئرمین بلاول بھٹو خطاب کریں گے۔ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ وہ مقامی حکومتوں کے انتخابات ہوتے نہیں دیکھ رہے کیونکہ پنجاب حکومت مقامی سطح پر اختیارات کو منتقل کرنے کی حق میں نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر مقامی حکومتوں کے الیکشن ہوئے تو پیپلز پارٹی الیکشن لڑنے کے لیے تیار ہے اور اس ضمن میں الیکشن جیت کر کئی سرپرائز دے گی۔ انہوں نے کہا کہ مئی 2013 ؁ء کو انتخابات میں پیپلز پارٹی کو دھاندلی کی وجہ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ پریس کانفرس میں سیکرٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ، دیوان محی الدین ، سہیل ملک، منظور مانیکا، میاں وحید، افنان بٹ، عابد صدیقی اور علامہ یوسف اعوان نے شرکت کی ۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں