Politics of sit-ins will meet ill- fate: Tanvir Ashraf Kaira

1959417_460777864059974_3712935093294000977_n
Secretary General PPP, Punjab, Tanvir Ashraf Kaira in a statement issued from here today has stated that the sin-ins politics have proved an exercise in futility adding the decision of the one of the PAT leader to pack up vindicated the stance of the PPP taken right from the beginning in this regard. He will not return to the failed political strategy, he predicted
He said that the other Party would also meet the same ill-fate because these tactics would not force the Prime Minister to tender resignation which was their untenable and unconstitutional demand by any measure.
The tempo of the sit-ins is already on the sharp decline and the enthusiasm of the participants and its leaders have been muted to a pitible extent, he maintained.
He advised them to shun the politics of Dharanas and use the form of Parliament for the honourable retreat and also for the resolution of the issues of national importance adding their apparent disdain to the mother of all institutions was unforgiving and would be held against them in future.
He said that the PPP had reservations about the authenticity of the elections but accepted the results for the sake of worthwhile cause, continuity of the political process, in the largest interest of the country and democracy.
Mr. Tanvir Ashraf Kaira complimented the vision of the former President Asif Ali Zardari who voluntarily handed over his powers to the Parliament to make it as the only institution to decide the issues of constitutional importance to the exclusion of others.
He recalled that the Ex-Presidents recklessly used the powers in sacking the democratic governments despite their majority in the Parliament.
He expressed his firm hope that the role of the PPP in the present political context would make qualitative contributions in ensuring the continuity of the democratic system in the country.
PPP commitment to democracy and the constitution amply manifested when it suggested to the government to convene the joint session of the Parliament that essentially turned the table in favour of democracy and as a consequence to the government of the day as well.
He made it clear that PPP would continue to play the role of an effective opposition doing issues based politics and would not allow the derailment of the democratic dispensation through the politics of sit-ins.

سیکرٹری جنرل تنویر اشرف کائرہ پیپلزپارٹی پنجاب نے آج یہاں سے جاری بیان میں دھرنوں کی سیاست کو بے سود قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان عوامی تحریک کا دھرنے کو ختم کرنے کا فیصلہ پیپلز پارٹی کے شروع کے موقف کی تائید ہے جو اس طرزِ سیاست کی مخالف تھی۔ انہوں نے پیشینگوئی کی کہ اب پاکستان عوامی تحریک دھرنوں کی سیاست کی اب دوبارہ غلطی نہیں کرے گی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی قسمت آزمائی کا بھی یہی انجام ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ اب انکے دھرنوں میں جوش و جذبے میں قابل رحم حد تک کمی آگئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کا وزیراعظم سے استعفیٰ کا مطالبہ سراسر غیر آئینی ہے۔ انہوں نے انکو مشورہ دیا کہ وہ اب بھی پارلیمنٹ میں بیٹھ کر قومی مسائل کو حل کرنے کی خلوص نیت سے کوشش کریں جس سے انکو ایک واپسی کا باعزت راستہ بھی مل جائے گا اور پارلیمنٹ کے ادارے کی توقیر میں بھی اضافے کا باعث بنے گا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی اس وقت پارلیمنٹ کی اہمیت کو کم کرنے کی کوششیں انکے سیاسی مستقبل پر منفی اثرڈالیں گی۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پیپلزپارٹی کو بھی مئی 2013 ؁ء کے انتخابات پر تحفظات تھے لیکن اسکے باوجود پارٹی کی اعلیٰ قیادت نے جمہوریت کے تسلسل کی خاطر نتائج کو تسلیم کیا ۔ تنویر اشرف کائرہ نے سابق صدر آصف علی زرداری کی قائدانہ صلاحیتیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے رضاکارانہ طور پر اپنے اختیارات پارلیمنٹ کو دے دےئے جس سے جمہوریت کا مستقبل محفوظ ہوا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر وہ اختیارات پارلیمنٹ کو نہ دیتے تو 58(2)B کی تلوار حکومت کے سر پر لٹکتی رہتی۔ انہوں نے کہا کہ سابق صدور نے ان صدارتی اختیارات کو ماضی میں جمہوری حکومتوں کے خلاف بڑی بے رحمی سے استعمال کیا اسکے باوجود کہ انکے پاس پارلیمنٹ میں اکثریت کی حمایت حاصل تھی۔ انہوں نے اس امر کا اظہار کیا کہ پیپلز پارٹی جمہوریت اور آئین کے تحفظ کے لیے موجودہ جاری سیاسی بحران میں فیصلہ کن کردار ادا کرے گی جس سے جمہوریت کا مستقبل پائیدار بنیادوں پر محفوظ ہو گا۔ تنویر اشرف کائرہ نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی جمہوریت دوست پالیسی کا اور کیا ثبوت ہو سکتا ہے کہ اس میں اپوزیشن پارٹی ہونے کے باوجود حکومت کو پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس بلانے کا مشورہ دیا جس سے جمہوریت دشمن طاقتوں کو پسپائی ہوئی اور جمہوری حکومت میں اعتماد بحال ہوا۔ انہوں نے واضح کیا کہ پیپلز پارٹی بحیثیت اپوزیشن پارٹی کے ایشو کی بنیاد پر سیاست کرنے میں پرعزم ہے اور کسی طرح بھی جمہوریت کو پٹڑی سے اترنے کی اجازت نہیں دیگی۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں