#PPPIsBack: Chaudhary Muhammad Hussain Advocate joins #PPP

10751666_10205210843216882_111727972_n

عارف والا کے لاہور ہائی کورٹ کے وکیل چوہدری محمد حسین نے اپنے ساتھیوں سمیت آج یہاں میاں منظور احمد وٹو صدر پیپلز پارٹی پنجاب سے ملاقات کے بعد پیپلز پارٹی میں شرکت کا اعلان کیا ۔ یاد رہے کہ چوہدری محمد حسین پہلی دفعہ کسی سیاسی جماعت میں شامل ہوئے ہیں۔ انہوں نے NA-166 سے 2013 ؁ء میں بحیثیت آزاد امیدوار کے انتحاب لڑا تھا۔ میاں منظور احمد وٹو نے انکی شرکت کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ اس سے اس علاقے میں پارٹی کو فعال بنانے میں بڑی مدد ملے گی۔ اس موقع پر باتیں کرتے ہوئے میاں منظو ر احمد وٹو نے کہا کہ حکومت پاکستان تحریک انصاف کے استعفے منظور نہیں کرنا چاہتی اور حقیقت میں پاکستان تحریک انصاف استعفے دینا بھی نہیں چاہتی۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت اس لیے استعفے منظور نہیں کرنا چاہتی کیونکہ اس سے پارلیمنٹ کی نمائندہ حیثیت متاثر ہوگی اور موجودہ بحران مزید شدت اختیار کر جائے گا۔ پاکستان تحریک انصاف استعفے اس لیے نہیں دینا چاہتی کیونکہ یہ پارلیمنٹ کو سیاسی حریفوں کے لیے کھلا نہیں چھوڑنا چاہتی کیونکہ اس سے پی ٹی آئی کی روزانہ سرزنش پارلیمنٹ کے فورم سے ہو گی جسکا وہ دفاع نہ کر سکے گی۔ انہوں نے کہا کہ اگر پی ٹی آئی استعفی دینے میں مخلص ہو تو پھر اسکو کونسی وجہ ممبران کو انفرادی طور پر سپیکر کو ملنے سے منع کر رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ رولز آف بزنس انفرادی طور پر سپیکر کو مل کر اپنے استعفی کی تصدیق کرنا ہوتی ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پی ٹی آئی کے استعفی نہ دینے کی ایک وجہ اور بھی ہے کیونکہ پی ٹی آئی پنجاب میں لیڈر آف اپوزیشن کے عہدے کو کھونا نہیں چاہتی۔ اس سے قبل چوہدری محمد حسین نے کہا کہ پاکستان میں پیپلز پارٹی ہی ایک ایسی سیاسی جماعت ہے جسکا جمہوریت ، آئین اور قانون کی بالادستی کی جدوجہد بینظیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کا منشور پاکستان کو مسائل سے نجات دلا سکتا ہے۔ دوسرے معززین جنہوں نے پارٹی میں شرکت کی، ان میں محمد عدنان، ڈاکٹر عطا ء الحق، محمد ارشد فاروق، ذیشان، چوہدری عبد الوحید اور چوہدری تنویر اقبال شامل ہیں۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں