چیف جسٹس کا سیاسی کردار اور آمرانہ رویہ جمہوریت کے لۓ خطرناک ہے۔ راجہ عامر خان

پاکستان پیپلز پارٹی وسطی پنجاب کے سکریٹری اطلاعات راجہ عامر خان نے آرمی چیف کے
بیان کی تائید کرتے ہوۓ کہا ہے کہ جنرل کیانی نےدرست طور کہا ہے کہ تمام ادارے اپنی آئینی حدود تک رہیں اور اس کو عبور نہ کریں اور فرد واحد کی غلطی کو پورے ادارے کی غلطی نہیں کہا جاسکتا، راجہ عامر خان نے کہا کہ کسی ایک ادارے کوجمہوری آئینی نظام میں تنہا قومی مفادات کاذمہ دار نہیں ٹھہرایا جاسکتا،سب کواپنے اپنے طرز عمل کاجائزہ لینا چاہیے اورآئینی حدود سے تجاوز نہیں کرنا چاہیے۔ چیف جسٹس سیاسی بیا نات دے کر اور سیاسی تقاریر کرکے اپنے آئینی کردار سے تجاوز کرچکے ہیں، اس سے قبل وہ عوام کے منتخب وزیراعظم کو غیرآئینی طور پرگھر بھیج چکے ہیں۔ چیف جسٹس کا سیاسی کردار اور آمرانہ رویہ جمہوریت کے لۓ خطرناک ہے، اس سے ریاستی اداروں کے درمیان تناؤاور معاشرے میں سیاسی انتشار پیدا ہوگا۔ جو جمہوریت اور قومی مفادات کے لۓ خطرناک ہے۔ آرمی چیف کے بیان میں کوئی منفی بات نہیں ہے انھوں نے واضح کیا ہے کہ قانون کے دائرے میں رہ کر کام کریں گے اور کسی کے معاملات میں دخل اندازی نہیں کریں گے ۔ انھوں نے کہاکہ ایک فرد کا جرم پورے ادارے کا جرم نہیں ہوتا ۔ قانون کی حکمرانی کو طاقت دینی ہے تو تمام اداروں کو سیاسی و قانونی دائرہ کار میں رہ کر کام کرنا ہوگا. تمام اداروں کو آئینی حدودمیں رہ کر کام کر نا چاہیے‘ملک کی بقا جمہو ریت سے وابستہ ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں