PPP Punjab determined to make the foundation day a big success

Picture
Mian Manzoor Ahmed Wattoo, President Punjab PPP, presided over a meeting here today of PPP Allied Wings consisting PYO, PSF, Farmer, Labor, Cultural, Ulema, Minorities, Human Rights, Social Media Wings hailing from Punjab, to finalize the recommendations to observe the Foundation Day of the PPP falling on November 30 in a befitting manners.
While talking to media after the meeting, Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that the PPP Punjab was determined to make the Foundation Day a big success and Chairman Bilawal Bhutto would be in Lahore for at least three days.
He said that the PPP Punjab was the host of All Pakistan Foundation Day Celebrations and delegations from all over the country would participate. Delegates from Sindh, Balochistan, Southern Punjab, KPK, Azad Kashmir, Gilgit/Baltistan will come to Lahore for the celebrations.
He said that the Convention may take place outside the Bilawal House, Lahore, in view of the anticipated heavy attendance.
Mian Manzoor Ahmed Wattoo further said that he had very useful meeting with the district Information Secretaries of the PPP Punjab as their role was crucial in disseminating the message of the Party at the grassroots level.
He stated that now the news stories released from Lahore regarding the activities of the Party would be instantaneously sent to the district information secretaries for publication in the local newspapers.
While responding to a question, Mian Manzoor Ahmed Wattoo said that Mr. Jehangir Badar was a sincere and dedicated leader of the Party and we would like to benefit from his experience.
He further said that he had been appointed as the Chief Co-coordinator and was extending full co-operation as a facilitator in organizing the Foundation Day of the Party. There was no question of “over and above” as some are engaged in the guess work, he added.
Secretary General Tanvir Ashraf Kaira, Khurram Jahangir Wattoo (MPA), Nawab Sher Vaseer, Manzoor Manika, Suhail Mailk, Molana Yousuf Awan, Doctor Kheyam, Afnan Butt and Khalid Bokhari.

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے آج پنجاب بھر کے پیپلز یوتھ آرگنائزیشن، پی ایس ایف،لیبر، کسان ، علماء، اقلیتوں ، ہیومن رائٹس، سوشل میڈیا کلچرل ونگز کے صدور، سیکرٹری جنرل اور انفارمیشن سیکرٹریوں کے مشترکہ اجلاس کی صدرات کی جسمیں پیپلز پارٹی کے آل پاکستان یوم تاسیس جو کہ30 نومبر کو لا ہور میں ہو گا، کے ضمن میں سفارشات مرتب کی گئیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ سفارشات چےئرمین بلاول بھٹو کو بھیجی جائیں گی جسکے بعد انکے پروگرام کو حتمی شکل دی جائیگی۔ انہوں نے مزید کہا کہ انکا پروگرام آئندہ دو سے تین روز میں فائنل ہو جائے گا۔اجلاس کے بعد میاں منظور احمد وٹو نے میڈیا سے باتیں کرتے ہوئے کہا کہ پیپلز پارٹی پنجاب لاہور میں یوم تاسیس کو تاریخی کامیابی سے ہمکنار کرے گی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ تمام عہدیداران اور کارکنان اس حوالے سے پر عزم ہیں۔میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ اس یوم تاسیس پر سارے پاکستان سے وفود آئیں گے جسمیں صوبہ سندھ، بلوچستان، خیبرپختونخواہ، آزاد کشمیر، گلگت بلتستان اور فاٹا شامل ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کیونکہ یوم تاسیس لاہور میں ہو رہا ہے اس لیے پیپلز پارٹی پنجاب اسکی میزبان ہے۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ انکی پیپلز پارٹی پنجاب کے انفارمیشن سیکرٹریوں سے میٹنگ بڑی سود مند رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پیپلز پارٹی پنجاب کا میڈیا اور سوشل میڈیا ضلعی انفارمیشن سیکرٹریوں سے بہتر رابطے قائم کریں گے اور جو بھی خبر یہاں سے جاری ہو گی وہ فورًا انفارمیشن سیکرٹریوں کو لوکل اخبارات میں چھپنے کے لیے بھیج دی جائے گی تا کہ پیپلز پارٹی کا پیغام عوام تک ہر سطح پر پہنچے۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ جہانگیر بدر ایک تجربہ کار اور مخلص کارکن ہیں اور وہ بحیثیت چیف کوآرڈینیٹر کے یوم تاسیس پر اپنا بھرپور تعاون پیش کریں گے۔انہوں نے کہا کہ اس ضمن میں ’’اوور اینڈ ابو‘‘کوئی مسئلہ نہیں جو بعض لوگ اس کو مسئلہ بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ چےئرمین بلاول بھٹو لاہور میں کم از کم 3 دن قیام کریں گے جسکے دوران وہ یوم تاسیس کی تقریبات میں شرکت کے دوران پارٹی عہدیداروں سے پنجاب میں پارٹی کو فعال بنانے کے لیے انکے خیالات سے آگاہی حاصل کریں گے۔ پریس کانفرنس میں تنویر اشرف کائرہ، خرم جہانگیر وٹو (ایم پی اے)، منظور مانیکا، سہیل ملک، افنان بٹ، ڈاکٹر خیام، علامہ یوسف اعوان، نواب شیر وسیر، خالد بخاری، احسان الحق وغیرہ شامل تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں