Indian Peace Delegation calls on Mian Manzoor Ahmed Wattoo

DSC_0981
DSC_0979

پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے آج یہاں ہندوستان سے آئے ہوئے وفد کے اعزاز میں عشائیہ پر تقریر کرتے ہوئے ہندوستان اور پاکستان کو اچھے ہمسایہ کی طرح رہنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ دونوں ممالک کو مذاکرات کے ذریعے اپنے تمام مسائل حل کرنے چاہئیں جسمیں کشمیر کا مسئلہ بھی شامل ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ غربت، بیماری، جہالت دونوں ملکوں کی مشترکہ دشمن ہے اور ہمیں مل کر اس لعنت سے نجات حاصل کرنا ہو گی۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ پاکستان ہندوستان سے اچھے تعلقات قائم کرنا چاہتا ہے۔ انہوں نے یاد دلایا کہ وزیر اعظم پاکستان کا ہندوستان کے وزیراعظم کی حلف وفاداری کی تقریب میں شرکت انکا ایک بڑا امن کی خواہش کا مظہر تھا۔ میاں منظور احمد وٹو نے کہا کہ جب وہ ہندوستان گئے تو ان کا اسوقت کے وزیرااعلیٰ پرکاش سنگھ بادل نے زبردست استقبال کیا جسکے لیے وہ انکے دل کی گہرائیوں سے شکرگزار ہیں۔ اس موقع پر رامیش یادیو نے بھی تقریر کی اور کہا کہ وزیر اعظم واجپائی نے ہندوستان اور پاکستان کے تعلقات کو معمول پر لانے کے لیے مخلصانہ کوشش کی تھی جنکو انہوں نے بڑا سراہا۔ انہوں نے مزید کہا کہ دونوں ملکوں کو اچھے ہمسایوں کی طرح رہنا چاہیے اسکے علاوہ اور کوئی راستہ نہیں ہے۔ اس موقع پر محترم شاہین صاحب سابق ایم پی اے مقبوضہ کشمیر نے بھی خطاب کرتے ہوئے دونوں ملکوں کے درمیان عوامی رابطوں کے فروغ کی ضرورت پر زور دیا ۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے جس طرح کے پاکستانی عوام میں خیر سگالی کے جذبات دیکھے ہیں وہ قابل قدر ہیں۔ ہندوستان کا وفد سائوتھ ایشیا پیس کانفرنس کے سلسلے میں پاکستان آیا ہے جو کہ تین روز تک جاری رہے گی۔ عشائیے میں تنویر اشرف کائرہ، ثمینہ خالد گھرکی، چوہدری اسلم گل، نوید چوہدری، میاں محمد ایوب، میاں وحید، سہیل ملک، مولانا یوسف اعوان، راجہ عامر، خرم وٹو، منظور مانیکا، عابد صدیقی اور لبنیٰ چوہدری ایڈووکیٹ نے بھی شرکت کی۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں