پی پی پی کا حکومت سے لال مسجد کے خطیب اور حواریوں کو انجام تک پہنچانے کا مطالبہ

download

ظالمان سے مذاکرات کی بے سود کوشش نے پوری قوم کو ہیجان اور مخمصے میں مبتلا کئے رکھا جس کا نتیجہ آرمی پبلک اسکول کے معصوم بچوں کے قتل عام کی شکل میں برآمد ہوا ۔ لال مسجد کے انتہاپسند ملا کی ظالمان سے اعلانیہ ہمدردی سے معصوم طلباء کی روحیں تڑپ اٹھی ہیں
کراچی۔ پاکستان پیپلز پارٹی کے اراکین قومی اسمبلی میر منور تالپور، فقیر شیر محمد بالالانی اور نور محمد شاہ نے لال مسجد کے خطیب مولانا عبدلعزیز کے جمعہ کے خطاب میں واشگاف الفاظ میں نہ رکنے والے خودکش حملوں کی دھمکی دے کر پاکستان کی ریاست کی رٹ اور پاک فوج کو براہ راست متنبہ کیا ہے جو نہایت سنگین ہے اور کسی طور بھی برداشت یا نظرانداز نہیں کیا جاسکتا۔ مولانا عبدلعزیز کا جمعہ کی نماز سے قبل نمازیوں سے جارحانہ اور کھلم کھلا خطاب اس بات پر دلیل ہے کہ لال مسجد دہشت گرد طالبان اور داعش کی پاکستان میں نرسری اور ترویج گاہ ہے جو پاکستان کی سا لمیت کے ضامن عسکری ادارے، پاک فوج کے جنرل ہیڈکوارٹر سے کچھ ہی دوری پر واقع ہے۔ پاکستان پیپلز پارٹی میڈیا سیل سندھ سے جاری ہونے والے ایک مشترکہ بیان میں پی پی پی کے اراکین قومی اسمبلی نے کہا کہ ماضی میں لال مسجد کے منتظمین نے اپنی دہشت گردی کا سکہ جمانے کے لئے پاکستان کے دیرینہ دوست چین کے شہریوں کو یرغمال بنایا اور پاک فوج کے کرنل سمیت متعدد افسران اور جوانوں کو گولیوں کا نشانہ بنایا، ہونا تو یہ چاہیے تھا کہ لال مسجد کو جڑ سے ہی ختم کردیا جاتا لیکن اسے پنپنے اور ازسرنو منظم ہونے دیا گیا۔ تاہم اب وقت آگیا ہے کہ مولانا عبدلعزیز اور اس کے حواریوں کو فی الفور گرفتار کیا جائے اور قرار واقعی سزا دی جائے۔ اگر اس بار ایسا نہ کیا گیا تو شاید پھر کبھی ایسا نہ کیا جاسکے گا کیونکہ آج پوری قوم اور سیاسی جماعتیں پاک فوج کے شانہ بشانہ کھڑی ہیں۔انھوں نے کہا کہ پاکستان گزشتہ دو دہائیوں سے دہشت گردی کی لپیٹ میں ہے اور گزشتہ دو برسوں کے دوران دہشت گردوں نے جس طرح پاکستان کے طول و عرض میں بیگناہ شہریوں سمیت معصوم بچوں کو ظلم و بربریت کا نشانہ بنایا ہے اس کی مثال انسانی تاریخ میں کہیں نہیں ملتی۔ انھوں نے کہا کہ دہشت گرد طالبان سے امن مذاکرات کی بے سود کوشش کرکے ملک و قوم کو ایک عجیب مخمصے میں ڈال دیا گیا جس کا نتیجہ معصوم بچوں کے اجتماعی قتل کی شکل میں نمودار ہوا۔ دوسری جانب لال مسجد کے خطیب مولانا عبدلعزیز جیسے انتہا پسند بڑے آرام سے زندگی کے مزے لوٹ رہے ہیں جس سے معصوم بچوں کی روحیں تڑپ اٹھی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان پیپلزپارٹی پہلے ہی کہ چکی ہے کہ اب وہ وقت آچکا ہے کہ دہشت گردوں کے سرپرست اور مذہبی جماعتیں بے نقاب ہونگی اور ہورہی ہیں لہذا حکومت کو ان کے خلاف فوری ایکش لینا چاہیے اور ان پر پابندی عائد کرنا چاہیے۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف اپنے اصولی موقف سے کبھی پیچھے نہیں ہٹے گی۔

کیٹاگری میں : News

اپنا تبصرہ بھیجیں